رنگ ، خوشبو میں اگر حل ہو جائے

رنگ ، خوشبو میں اگر حل ہو جائے
رنگ ، خوشبو میں اگر حل ہو جائے

  

رنگ ، خوشبو میں اگر حل ہو جائے

وصل کا خواب مکمل ہو جائے

چاند کا چوما ہُوا سرخ گلاب

تیتری دیکھے تو پاگل ہو جائے

میں اندھیروں کو اُجالُوں ایسے

تیرگی آنکھ کا کاجل ہو جائے

دوش پر بارشیں لے کے گُھومیں

مَیں ہوا اور وہ بادل ہو جائے

نرم سبزے پہ ذرا جھک کے چلے

شبنمی رات کا آنچل ہو جائے

عُمر بھر تھامے رہے خوشبو کو

پُھول کا ہاتھ مگر شل ہو جائے

چڑیا پتّوں میں سمٹ کر سوئے

پیڑ یُوں پھیلے کہ جنگل ہو جائے

شاعرہ : پروین شاکر

Rang Khushboo Men Gar hall Ho Jaaey

Wasl Ka Khaab Mukammal Ho Jaaey

Chaand Ka Chooma Hua Surkh Gualaab

Teetri Daikhay To Paagal Ho Jaaey

Main Andhairon Ko Ujaalun Aisay

Teergi Aankh Ka Kaajal Ho Jaaey

Dosh Par Baarshen Lay K Ghoomen

Main , Hawaa Aor Wo Baadal Hi Jaaey

narm Sabzay Pe Zar a Jhuk K Chalen

Shabnami Raat Ka Aanchall Ho Jaaey

Umr Bhar Thaamay Rahay Khushboo Ko 

Phool Ka Haath magar Shall Ho Jaaey

Chirrya Patton Men Simatt Kar Soey

Pairr Yun Phialay Keh Jangal Ho Jaaey

Poet: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -