اپنی ہی صدا سنوں کہاں تک

اپنی ہی صدا سنوں کہاں تک
اپنی ہی صدا سنوں کہاں تک

  

اپنی ہی صدا سنوں کہاں تک

جنگل کی ہوا رہوں کہاں تک

ہر بار ہوا نہ ہوگی در پر

ہر بار مگر اٹھوں کہاں تک

دن گھٹتا ہے ، گھر میں حبس وہ ہے

خوشبو کے لیے رُکوں کہاں تک

پھر آکے ہوائیں کھول دیں گی

زخم اپنے رفو کروں کہاں تک

ساحل پہ سمندروں سے بچ کر

میں نام ترا لکھوں کہاں تک

تنہائی کا ایک ایک لمحہ

ہنگاموں سے قرض لوں کہاں تک

گر لمس نہیں تو لفظ ہی بھیج

میں تجھ سے جدا رہوں کہاں تک

سُکھ سے بھی تو دوستی ہو کبھی ہو

دُکھ سے ہی گلے ملوں کہاں تک

منسوب ہو ہر کرن کسی سے

اپنے ہی لیے جلوں کہاں تک

آنچل مرے بھر کے پھٹ رہے ہیں

پھول اُس کے لیے چُنوں کہاں تک

شاعرہ: پروین شاکر

Apni Hi Sadaa Sunun Kahan Tak

Jangal Ki  Hawaa Rahun Kahaan Tak

Har Baar Hawaa Na Ho Gi dar Par

Har Baar Magar Uthun kahan Tak

Dam Ghutta Hay ,Ghar Men Habs Wo Hay

Khushboo K Liay Rukun Kahan Tak

Phir Aa K Hawaaen Khol Den Gi

Zakhm Apnay Rafu Karun Kahaan Tak

Saahil Pe Samandron Say Bach Kar 

Main Naam Tira Likhun Kahaan Tak

Tanhaaee Ka Aik Aik Lamha

Hangaamon Say Qarz Lun Kahaan Tak

Gar Lams Nahen To Lafz Hi Bhaij

Main Tujh Say Juda Rahun Kahaan Tak

Sukh Say  Bhi To  Dosti  Kabhi Ho

Dukh Say Hi Galay Milun Kahaan Tak

Mansoob Ho Har Kiran Kisi Say

Apnay Hi Liay Jalun Kahaan Tak

Aanchal Miray Bhar K Phatt Rahay Hen

Phool Uss  K Liay Chunun Kahaan Tak

Poetess: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -