جاری کھاتوں کا خسارہ2 ارب 34 کروڑڈالر تک پہنچ گیا

جاری کھاتوں کا خسارہ2 ارب 34 کروڑڈالر تک پہنچ گیا

  

                                 کراچی(این این آئی) رواں مالی سال2014-15 کے پہلے پانچ ماہ کے دوران جاری کھاتوں کاخسارہ گزشتہ سال کے اسی عرصے کے مقابلے میں 9.3 فیصد اضافے کے بعد 2 ارب 34 کروڑ 50 لاکھ ڈالر تک پہنچ گیا ہے۔اکتوبر 2014 کے مقابلے میں نومبر کے مہینے کا خسارہ 113 فیصد اضافے سے 47 کروڑ 50 لاکھ ڈالر رہا۔ پہلی سہ ماہی میں کرنٹ اکاﺅنٹ کو ایک ارب 64 کروڑ 70 لاکھ ڈالر کا خسارہ درپیش تھا اس طرح دوسری سہ ماہی کے دوران خسارے میں 69 کروڑ 80 لاکھ ڈالر42.38 فیصداضافہ ہوا ہے۔اسٹیٹ بینک آف پاکستان کے توازن ادائیگی کے اعدادوشمار کے مطابق پانچ ماہ کا کرنٹ اکاﺅنٹ خسارہ جی ڈی پی کے 2 فیصد کے برابر ہے۔ پانچ ماہ کے دوران اشیا کی تجارت کا خسارہ 7 ارب 37 کروڑ 60 لاکھ ڈالر کے مقابلے میں 8 ارب 61 کروڑ ڈالر رہا۔ خدمات کی تجارت کو درپیش خسارے کی مالیت ایک ارب 30 کروڑ 80 لاکھ ڈالر کے مقابلے میں 99 کروڑ 60 لاکھ ڈالر رہا اشیا و خدمات کی تجارت کا مجموعی خسارہ 8 ارب 68 کروڑ 40 لاکھ ڈالر کے مقابلے میں 9 ارب 60 کروڑ 60 لاکھ ڈالر تک پہنچ گیا۔

فنانشل اکانٹ کو گزشتہ سال کے اسی عرصے میں 53 کروڑ 30 لاکھ ڈالر کا خسارہ درپیش تھا جبکہ رواں مالی سال فنانشل اکانٹ کو درپیش خسارے کی مالیت ایک ارب 42 کروڑ 60لاکھ ڈالر تک پہنچ گئی۔ بیرون ملک مقیم پاکستانیوں کی ترسیلات 6 ارب 40 کروڑ 70 لاکھ ڈالر کے مقابلے میں 7 ارب 39 کروڑ 90لاکھ ڈالر تک پہنچ گئیں۔

مزید :

کامرس -