شام ،کینسر میں مبتلا سات بچے علاج کے لیے صدر کی اجازت کے منتظر

شام ،کینسر میں مبتلا سات بچے علاج کے لیے صدر کی اجازت کے منتظر

  



دمشق(این این آئی)شام کے صدر بشارالاشد ایک ایسی درخواست پر غور کر رہے ہیں جو کینسر میں مبتلا سات بچوں کے فوجی محاصرے میں موجود علاقے، مشرقی غوطہ سے انخلا سے متعلق ہے۔برطانوی خیراتی ادارے کے ایک مشیر ہمیش دی بریٹن گورڈن نے برطانوی ٹی وی کو بتایاکہ صدر اسد کے پرائیویٹ دفتر نے کہا کہ وہ رواں ہفتے اس حوالے سے فیصلہ کریں گے۔یہ سات بچے مشرقی غوطہ میں موجود ان 130 بچوں میں شامل ہیں جنھیں فوری علاج کی ضرورت ہے۔خیال رہے کہ دمشق کے نواحی علاقے گذشتہ چار برس سے فوج کے زیر قبضہ ہیں۔مشرقی غوطہ میں کام کرنے والے طبی ادارے یونیئن آف میڈیکل کیئر اینڈ ریلیف آرگنائزیشن کے معاون بریٹن گورڈن نے بتایا کہ ہم سمجھتے ہیں کہ صدر اسد اس بارے میں سوچ رہے ہیں۔ ہم ان سے براہ راست بات چیت کے لیے انھیں منگل کو دوبارہ فون کریں گے۔رواں ماہ کے آغاز میں امدادی ادارے ریڈ کراس نے کہا تھا کہ مشرقی غوطہ میں زندگی ناممکن ہوتی جا رہی ہے، اور وہاں صورتحال خطرناک نقطے پر پہنچ چکی ہے۔

یاد رہے کہ اقوام متحدہ وہاں سے طبی بنیادوں پر متاثرین کے انخلا کے لیے کوششیں کر رہا ہے۔ اب تک درجنوں شہر حالیہ دنوں کی حکومتی بمباری سے ہلاک ہوئے اور بہت سے بچے خوراک کی کمی کا شکار ہیں۔

مزید : عالمی منظر


loading...