آئینی حقوق دیے بغیر ٹیکسوں کا نفاذ ، یوتھ آف گلگت بلتستان کا احتجاج

آئینی حقوق دیے بغیر ٹیکسوں کا نفاذ ، یوتھ آف گلگت بلتستان کا احتجاج

  



لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک)گلگت بلتستان میں آئینی حقوق دیے بغیر ٹیکسوں کے نفاذ پر گلگت بلتستان کے ساتھ ملک بھر میں مقیم گلگت بلتستان کے لوگ سراپا احتجاج،اسلام آباد کراچی،لاہور سمیت کئی شہروں میں احتجاج،لاہور پریس کلب کے سامنے گلگت بلتستان سے تعلق رکھنے والے طلبا اور نوجوانوں کی تنظیم یوتھ آف گلگت بلتستان کا غیر قانونی ٹیکس کی نفاذ کیخلاف احتجاجی مظاہرہ،یوتھ آف گلگت کی مجلس وحدت مسلمین اور عوامی تحریک نے بھی حمایت کا اعلان کر دیا۔مجلس وحدت مسلمین کے رہنما علامہ حسن ہمدانی اور عوامی تحریک کے رہنما ساجد بھٹی نے بھی خطاب کیا۔ مظاہرین سے خطاب کرتے ہوئے یوتھ آف گلگت بلتستان کے رہنماوں کا کہنا تھا کہ گلگت بلتستان دنیا کا وہ واحد خطہ ہے جہاں کے لوگ ستر سال سے اپنے پاکستانی شہری کہلانے اور پاکستان کے آئین کا حصہ بننے کی تحریک چلا رہے ہیں،لیکن حکمرانوں نے اس اہم خطے کو اور وہاں کے محب وطن عوام کے حقوق کو پس پشت ڈال کر صرف وہاں کے وسائل کو لوٹنے میں مصروف رہے،آئینی حقوق سے محروم عوام پر غیر قانونی ٹیکسسز کا نفاذ ہم کسی بھی صورت قبول نہیں کرینگے،ہم آئینی حقوق ملے بغیر کسی بھی قسم کے ٹیکس کے نفاذ کو خطے کے عوام پر ظلم تصور کرتے ہیں،ہم اس مظاہرے کے ذریعے ارباب اختیار سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ گلگت بلتستان کے غیور اور محب وطن عوام کو آئینی حق کے ساتھ ساتھ سی پیک میں بھی دوسرے صوبوں کے برابر حقوق دیے جائیں،گلگت بلتستان کے باشعور اور غیور عوام بیدار ہیں اور ہم ملک دشمن عناصر کے کسی بھی سارش کو کامیاب نہیں ہونے دینگے،گلگت بلتستان کو پاکستان کا آئینی صوبہ بننے تک ہم اپنی جدو جہد جاری رکھیں گے،غیر قانونی ٹیکسسز کے نفاذ کیخلاف جاری تحریک کو منطقی انجام تک پہنچا کر دم لیں گے،گلگت بلتستان کے غیور عوام کا مطالبہ ہے کہ پہلے حقوق دو پھر ٹیکس لو،مظاہرے میں یوتھ آف گلگت بلتستان کے رہنماوں زہیر قنبری،انجینئر یاور،دانیا شاہ سمیت دیگر رہنماوں نے خطاب کیا۔

مزید : میٹروپولیٹن 1


loading...