ٹیسٹ سیریز، پاکستان کی جنوبی افریقہ کےخلاف ناقص کارکردگی

ٹیسٹ سیریز، پاکستان کی جنوبی افریقہ کےخلاف ناقص کارکردگی
ٹیسٹ سیریز، پاکستان کی جنوبی افریقہ کےخلاف ناقص کارکردگی

  

پاکستان کرکٹ ٹیم جنوبی افریقہ کے خلا ف ٹیسٹ سیریز میں شکست کھاگئی قومی ٹیم کو ٹیسٹ سیریز میں3-0 کی شرمناک شکست کا سامنا کرنا پڑا جب سیریز کا آغاز ہوا تھا تو اس وقت ہی پاکستان نے ناقص کارکردگی کا مظاہر ہ کیا تھا جس کے بعد پاکستان کی شکست کی ہی توقع کی جارہی تھی پاکستان کی ٹیم جنوبی افریقہ کے خلاف ٹیسٹ سیریز کے ہر شعبہ میں ہی ناکام نظر آئی ٹیم نے شائقین کرکٹ کو شدید مایوس کیا قومی ٹیم سے شائقین کو اتنی بری کارکردگی کی امید بھی نہ تھی کوئی بھی کھلاڑی جنوبی افریقہ کے خلاف عمدہ پرفارمنس نہ دے سکا نو سال کے بعد ٹیسٹ سیریز جیتنا تو ایک طرف پاکستانی ٹیم تو ایک ٹیسٹ میچ بھی جیتنے میں کامیاب نہیں ہوئی قومی کرکٹ ٹیم کی جنوبی افریقہ کے خلاف اس کی سر زمین پر یہ ناقص ترین کارکردگی ہے پاکستان نے ٹیسٹ سیریز کے بعد اب جنوبی افریقہ کے خلاف ٹی20 اور ون ڈے کرکٹ میچوں پر مشتمل سیریز کھیلنی ہے پاکستانی ٹیم سے اب اس سیریز میں کیا توقع کی جاسکتی ہے کیا پاکستان جنوبی افریقہ سے ٹیسٹ سیریز کی شکست کا بدلہ لے گا یہ مشکل ہے کیونکہ پاکستانی ٹیم اس وقت شدید پریشر میں ہے اور اچھی کارکردگی دکھانا اس کے لئے اب ممکن نہیں ہے سابق کرکٹرز بھی اس وقت ٹیم کی کارکردگی پر کافی خفا ہیں اور ان کا کہنا ہے کہ سلیکشن کمیٹی نے کھلاڑیوں کا انتخاب میرٹ پر نہیں کیا اس لئے اس کو شکست کاسامناکرنا پڑا ہے اگر ٹیم کے کھلاڑی میرٹ پر منتخب کئے جاتے تو یہ صورتحال نہ ہوتی کم از کم پاکستان ایک ٹیسٹ میچ تو بچانے میں کامیاب ہوہی جاتا لیکن ایسا نہیں ہوسکا اسی طرح ٹی ٹونٹی اور ون ڈے سیریز کےلئے بھی جن کھلاڑیوں کا انتخاب کیاگیا ہے اس پر بھی سابق کرکٹرزکو تشویش ہے اور اسی بناءپر ان کا یہ کہنا ہے کہ پاکستان کو جس طرح ٹیسٹ سیریز میں مشکلات کا سامنا کرنا پڑا ہے اسی طرح اس کو ون ڈے اور ٹی ٹونٹی میں بھی بہت مشکلات کا سامنا کرنا پڑے گا پی سی بی کو اس حوالے سے انہوں نے شدید تنقید کا نشانہ بنایا ہے ۔

مزید :

کالم -