قدرتی گیس کی درآمد اور فروخت کا لائسنس نجی شعبہ کے حوالے کر دیا گیا

قدرتی گیس کی درآمد اور فروخت کا لائسنس نجی شعبہ کے حوالے کر دیا گیا

  

لاہور( اپنے نامہ نگار سے )حکومت نے ملکی تاریخ میں پہلی بار قدرتی گیس کی درآمد و فروخت کا لائسنس نجی شعبہ کو دے دیا گیاہے۔پاکستان میں اپنی نوعیت کا پہلا لائسنس یونیورسل گیس ڈسٹری بیوشن کمپنی (یو جی ڈی سی) کو جاری کیاگیا ہے۔ اس سلسلہ میں ضروری قانونی تقاضوں کی تکمیل میں انیس مہینے لگے جس میں اوگرا کی جانب سے قانونی عمل، عوامی سماعت اور تھرڈ پارٹی آڈٹ وغیرہ شامل ہیں جسکے بعد یو جی ڈی سی کو لائسنس جاری کر دیا گیا جسکے بعد یہ کمپنی اپنے طور پر ایل این جی درآمد کر کے یا کسی بھی سرکاری یا نجی ذریعے سے خرید کر ملک کے کسی بھی حصہ میں فروخت کر سکے گی۔ اس موقع پر کمپنی کے چیئرمین افتخار احمد اور چیف ایگریکٹو آفیسرغیاث پراچہ نے میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ یہ لائسنس ملکی آئل اینڈ گیس کی تاریخ میں ایک منفرد عمل ہے جس سے اس شعبہ میں سرمایہ کاری کو فروغ اور توانائی بحران حل کرنے میں مدد ملے گی۔ یہ دنیا کی تاریخ میں کسی ڈوبتی صنعت کی جانب سے اپنی مدد آپ کے تحت بیل آؤٹ کی پہلی کوشش ہے جسے دنیا بھر کے بزنس سکولوں میں کیس سٹڈی کے طور پر پڑھایا جائیگا۔افتخار احمد اور غیاث پراچہ نے کہا کہ ابتدائی طور پر پنجاب کے ہزاروں سی این جی سٹیشنز کو سوئی گیس کمپنیوں کے نیٹ ورک کے زریعے مروجہ قوانین کے مطابق لگاتار اور بلا تعطل گیس فراہم کی جائے گی جو پٹرول سے تیس فیصد سستی ہو گی جس سے آئل امپورٹ بل اور آلودگی میں کمی آئے گی جبکہ لاکھوں افراد کو روزگار ملے گا۔اس سے پنجاب کے سی این جی شعبہ میں کی گئی 350 ارب کی سرمایہ کاری ڈوبنے سے بچ گئی ہے اور اس کامیابی کی سہرا وزیر اعظم نواز شریف کے سر ہے ۔

مزید :

علاقائی -