افغانحکومت نے طالبان سے امن مذاکرات میں شریک ہونے کی درخواست کر دی

افغانحکومت نے طالبان سے امن مذاکرات میں شریک ہونے کی درخواست کر دی

  

 کابل(آئی این پی) افغان حکومت نے طالبان سے امن مذاکرات میں شریک ہونے کی درخواست کردی تاہم ساتھ ہی خبردار کیا ہے کہ متحارب گروپ امن مذاکرات میں شامل نہ ہوئے تو نہ صرف افغان حکومت بلکہ پاکستان ،چین اور امریکہ بھی انکے خلاف فوجی کاروائی کریں گے ، امن کے دروازے شدت پسندوں کے لیے ہمیشہ کھلے نہیں رہیں گے، افغان طالبان امن مذاکرات سے فائدہ اٹھائیں،غیرافغان اور افغانی عوام کے خلاف کارروائیاں کرنے والوں سے امن مذاکرات نہیں ہوں گے۔بدھ کو افغان میڈیا کے مطابق ملکی قومی سلامتی کے مشیر محمد حنیف اتمر نے ماسکو کی جانب سے عطیہ کی گئی 10 ہزار اے کے 47رائفلیں حوالے کرنے کی تقریب کے موقع پر کابل کیلئے روسی سفیر کے ہمراہ مشترکہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہاکہ ہم افغان طالبان سے درخواست کرتے ہیں کہ امن مذاکرات سے فائدہ اٹھائیں، اگر طالبان نے حکومت کے شروع کردہ امن عمل کا حصہ بننے سے انکار کیا تو وہ فوجی کاروائی کیلئے تیار ہوجائیں۔انھوں نے کہاکہ غیرافغان اور افغانی عوام کے خلاف کارروائیاں کرنے والوں سے امن مذاکرات نہیں ہوں گے، متحارب گروپ امن مذاکرات میں شامل نہ ہوئے تو پاکستان چین اور امریکہ سے انکے خلاف فوجی کاروائی کرنے کی درخواست کریں گے کیونکہ انھوں نے چارفریقی گروپ کے روڈ میپ میں ایسا کرنے کا وعدہ کیا ہے ۔افغان قومی سلامتی کے مشیرکا کہنا تھاکہ امن کے دروازے شدت پسندوں کے لیے ہمیشہ کھلے نہیں رہیں گے،وہ افغان طالبان جو اپنے ملک اور عوام کے خلاف لڑ رہے ہیں کو اس موقع سے ضرور فاہدہ اٹھاتے ہوئے مصالحتی عمل میں شامل ہونا چاہیے ۔انھوں نے امید ظاہر کی کہ جاری امن عمل سے تشدد کے خاتمے میں مدد ملے گی ۔

مزید :

علاقائی -