بدعنوانی کے خاتمہ کو قومی فرض سمجھ کر ادا کرنے کیلئے پرعزم ہیں: چیئرمین نیب

بدعنوانی کے خاتمہ کو قومی فرض سمجھ کر ادا کرنے کیلئے پرعزم ہیں: چیئرمین نیب

اسلام آباد(آن لائن) قومی احتساب بیورو (نیب) کے چیئرمین قمر زمان چودھری نے کہا ہے کہ پاکستان اقوام متحدہ کے بدعنوانی کی روک تھام کے کنونشن کے تحت آگاہی، تدارک اور قانون پر عملدرآمد کے مؤثر اقدامات کے ذریعے ہر قسم کی بدعنوانی کی روک تھام کیلئے پرعزم ہے، نیب وائٹ کالر کرائم کی تفتیش کیلئے نیب افسران اورپراسیکیوٹر کی استعداد کار میں اضافہ کیلئے اینٹی کرپشن ٹریننگ اکیڈمی کے قیام کا ارادہ رکھتا ہے، بدعنوانی تمام برائیوں کی جڑ ہے، نیب بدعنوانی کی روک تھام کیلئے شفافیت، پیشہ واریت پر عمل کرتے ہوئے اس کے خاتمہ کو قومی فرض سمجھ کر ادا کرنے کیلئے پرعزم ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے نیب ہیڈ کوارٹر میں اقوام متحدہ کے منشیات اور جرائم سے متعلق دفتر کے ڈپٹی ایگزیکٹو ڈائریکٹر ہیلڈو لالی ڈیموز کی قیادت میں منشیات اور جرائم کے بارے میں اقوام متحدہ کے وفد سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ چیئرمین نیب نے کہا کہ نیب کو گذشتہ تین سال کے دوران نجی، سرکاری تنظیموں اور افراد نے 3 لاکھ 26 ہزار 694 شکایات جمع کرائی ہیں۔ اس عرصہ کے دوران نیب نے 10 ہزار 992 شکایات کی جانچ پڑتال، 7303 انکوائریاں، 3648 انوسٹی گیشنز کی منظوری دی ہے جبکہ 2667 بدعنوانی کے ریفرنس متعلقہ احتساب عدالتوں میں دائر کئے گئے ہیں، سزا کی مجموعی شرح 73 فیصد ہے۔ 2016ء میں نیب کو موصول ہونے والی شکایات، انکوائریوں اور انوسٹی گیشنز کی تعداد 2015ء کے مقابلہ میں اسی عرصہ کے مقابلہ میں دوگنا ہیں۔ گذشتہ اڑھائی سال کے دوران ان اعداد و شمار سے ظاہر ہوتا ہے کہ نیب افسران بھرپور محنت، لگن اور دیانتداری سے اپنا قومی فرض ادا کر رہے ہیں۔ نیب کو شکایات کی تعداد میں اضافہ سے نیب پر عوام کے اعتماد کا اظہار ہوتا ہے۔ اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے ڈپٹی ایگزیکٹو ڈائریکٹر یو این او ڈی سی ہیلڈو لالی ڈیموز نے چیئرمین نیب قمر زمان چوہدری کی قیادت میں بدعنوانی کی روک تھام کیلئے نیب کی کوششوں کی تعریف کی اور چیئرمین نیب کی اسلام آباد میں جدید ٹریننگ اکیڈمی کے قیام کے وژن کے تناظر میں پاکستان اینٹی کرپشن اکیڈمی قائم کرنے اور نیب افسران کی استعداد کار میں اضافہ کیلئے ہر ممکن تعاون کا یقین دلایا۔

مزید : صفحہ آخر


loading...