اگر کامیاب آپریشن نہ ہوا تو پھر کونسی آرمی کو بلائیں گے : مصطفی کمال

اگر کامیاب آپریشن نہ ہوا تو پھر کونسی آرمی کو بلائیں گے : مصطفی کمال
اگر کامیاب آپریشن نہ ہوا تو پھر کونسی آرمی کو بلائیں گے : مصطفی کمال

  


کراچی(ڈیلی پاکستان آن لائن )پاک سر زمین پارٹی کے سربراہ مصطفی کمال نے کہا ہے کہ قوم کو امید دلائی گئی کہ دہشتگردی ختم کر دیں گے لیکن ابتک نیشنل ایکشن پلان کے 20نکات میں سے 18پر عملدرآمد نہیں ہوا ۔اگر کامیاب آپریشن نہ ہوا تو پھر کونسی آرمی کو بلائیں گے ۔

کراچی میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے انکا کہنا تھا کہ نیشنل ایکشن پلان پر سیاسی جماعتیں ایک دوسرے پر تنقید کر تی رہیں لیکن کسی نے کچھ نہیں کیا ۔ حالات کا تقاضا ہے کہ ساری جماعتیں سر جوڑ کر بیٹھیں ۔لاہور میں ایک میچ کرانے کے لئے کئی اجلاس ہو رہے ہیں۔

شادی کے سیزن میں اس چیز سے بال دھونے سے ان میں ایسی چمک آئے گی کہ سب آپ کی تعریف کرنے پر مجبور ہوجائیں گے

مصطفیٰ کمال نے کہا آوازیں آ رہی ہیں کہ ہر شہر میں آپریشن کیا جائے۔ پنجاب کو بھی رینجرز کے حوالے کیا جا رہا ہے۔ کراچی میں بھی 25 سال پہلے رینجرز کو اختیارات دیئے گئے تھے۔ کیا رینجرز کو اختیار دینے سے امن قائم ہو جائے گا۔ انہوں نے کہا ہر چیز کو آرمی اور رینجرز کے ذریعے حل نہیں کیا جا سکتا۔ اگر کامیاب آپریشن نہ ہوا تو پھر کونسی آرمی کو بلائیں گے۔

TapMad نے ہمہ وقت سرگرم رہنے والوں کے لئے انٹرٹینمنٹ کی نئی دنیا متعارف کروادی

پی ایس پی کے سربراہ کا مزید کہنا تھا کہ آپریشن مسئلے کا حل نہیں تمام اختیارات ایک جگہ پر جمع ہو گئے ہیں۔ نچلی سطح پر اختیارات منتقل کرنے پر ہی مسائل حل ہو سکتے ہیں اور کمیونٹی پولیسنگ سسٹم سے ہی دہشتگردی کا خاتمہ کیا جا سکتا ہے۔اب مائیں لاشیں اٹھا کر تھک گئی ہیں۔لاہور میں ایک میچ کرانے کے لئے کئی اجلاس ہو رہے ہیں۔

مزید : کراچی


loading...