’9/11 کا ڈرامہ امریکہ نے خود ہی کیا تاکہ۔۔۔‘ مستقبل سے واپس آنے کے دعویدار شخص نے ایسا دعویٰ کردیا کہ پوری دنیا دنگ رہ گئی، یہ بات تو ابھی تک کسی نے سوچی بھی نہ تھی کہ۔۔۔

’9/11 کا ڈرامہ امریکہ نے خود ہی کیا تاکہ۔۔۔‘ مستقبل سے واپس آنے کے دعویدار شخص ...
’9/11 کا ڈرامہ امریکہ نے خود ہی کیا تاکہ۔۔۔‘ مستقبل سے واپس آنے کے دعویدار شخص نے ایسا دعویٰ کردیا کہ پوری دنیا دنگ رہ گئی، یہ بات تو ابھی تک کسی نے سوچی بھی نہ تھی کہ۔۔۔

  

نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) ٹائم مشین کے ذریعے ماضی یا مستقبل میں چلے جانے والے کردار آپ نے فلموں میں تو دیکھے ہوں گے لیکن اب ایک شخص نے حقیقت میں یہ دعویٰ کر دیا ہے اور ساتھ ہی ایسا انکشاف کر دیا ہے کہ سن کر پوری دنیا دنگ رہ گئی۔ دی مرر کی رپورٹ کے مطابق مائیکل فلپس نامی اس نوجوان کا دعویٰ ہے کہ اس نے وقت میں مستقبل کی طرف سفر کیا اور 2043ءمیں پیدا ہوا۔ جب وہ اس زمانے میں یہ بات ہر کسی کو معلوم تھی کہ نائن الیون کا واقعہ امریکہ نے خود کرایا تھا ۔ اس کی وجہ یہ تھی کہ اس وقت کی امریکی انتظامیہ اس واقعے کے ذریعے امریکیوں کو متحدکرنا چاہتی تھی تاکہ امریکہ کو ایک اور خانہ جنگی سے محفوظ رکھ سکے۔نائن الیون سے قبل ایسے حالات پیدا ہو چکے تھے کہ امریکہ میں خانہ جنگی کا غالب امکان پیدا ہو چکا تھا۔اگر وہ ایسا نہ کرتا تو 2008ءمیں امریکہ میں خانہ جنگی شروع ہو جاتی اور وہ ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہو جاتا۔“

مائیکل کا کہنا تھا کہ ”نائن الیون کا منصوبہ ایک ایسے شخص نے تیار کیا تھا جس نے اس کے ساتھ مستقبل میں سفر کیا۔ اس شخص کا نام ’ٹائیٹر‘ (Titor)تھا اور وہ 2038ءسے واپس آ گیا تھا۔“ مائیکل نے دنیا کو شمالی کوریا اور امریکہ کی ایٹمی جنگ کے حوالے سے بھی متنبہ کیا ہے۔اس کے متعلق اس کا کہنا ہے کہ ”یہ دنیا کی تیسری جنگ عظیم ہو گی جو پہلی دونوں جنگوں سے کئی گنا زیادہ خوفناک اور تباہ کن ہو گی۔“ اپنے بارے میں مائیکل نے بتایا کہ اس نے 18سال کی عمر میں فوج میں نوکری کی۔ پھر وہ ایس ایس میں شامل ہو گیا اور کل وقتی ’ٹائم ٹریولر‘ بن گیا۔

مزید : بین الاقوامی