ناقص خوراک سے ہلاکتیں!

ناقص خوراک سے ہلاکتیں!

کراچی میں ناقص خوراک کی وجہ سے ایک اور المناک سانحہ پیش آ گیا اس میں کوئٹہ، بلوچستان سے سیر کے لئے آئے خاندان کے پانچ بچوں سمیت چھ افراد جہاں بحق ہو چکے اور بچوں کی والدہ سخت علیل اور زیر علاج ہیں۔ بتایا گیا کہ کوئٹہ کی ایک فیملی تفریح کے لئے کراچی آئی اور وفاقی حکومت کے ریسٹ ہاؤس قصر ناز میں رہائش پذیر ہوئی۔ فیملی کے سربراہ نے رات کے کھانے کے لئے ایک ریسٹورنٹ سے بریانی سمیت سالن وغیرہ لیا اور سب نے مل کر کھا لیا۔ صبح کے وقت اسے محسوس ہوا کہ بیوی اور بہن کو فوڈ پوائزننگ جیسی شکایت ہو گئی ہے وہ ان کو لے کر آغا خان ہسپتال چلا گیا اور وہاں داخل کرانے کے بعد بچوں کے لئے واپس آیا کہ ان کو ناشتہ کرایا جا سکے۔ تاہم کمرے میں پانچوں بہن بھائی بے ہوشی کی کیفیت میں پائے گئے، ان کو بھی جلدی سے آغا خان ہسپتال لے جایا گیا تو ڈاکٹروں نے ان کی موت کی تصدیق کر دی، یوں ایک پورا گھرانہ ناقص خوراک کی زد میں آ گیا۔ بعد ازاں فیصل کی بہن اور بچوں کی پھوپھی بھی چل بسی۔ یہ تو اموات کے سانحات ہیں جن کی وجہ سے اتنا کچھ ہوا اور ناقص ملاوٹ والی اشیاء خوردنی سے شہریوں کی صحت کا جو نقصان ہوتا اور بیماریاں پھیلتی ہیں ان کا کوئی سد باب ہی نہیں۔ اتنی بھاری تعداد میں جانیں جانے اور ایک پورے کنبے کی اموات سے بھی ہوش نہ آئے تو افسوس ہوگا ضروری امر یہ ہے کہ نہ صرف سرکاری شعبے اپنے فرائض پوری تندہی اور دیانت داری سے ادا کریں بلکہ قوانین میں ترمیم کر کے ان کوقابل تعزیر بنایا جائے اور جان کے بدلے جان کی سزا دی جائے۔

مزید : رائے /اداریہ


loading...