مغلپورہ ، دو ٹریفک وارڈنز کا نوجوان پر تشدد، حوالات میں بند کر دیا

مغلپورہ ، دو ٹریفک وارڈنز کا نوجوان پر تشدد، حوالات میں بند کر دیا

لاہور(خبرنگار) مغلپورہ کے علاقہ میں دوٹریفک وارڈنز نے موٹر سائیکل کا چالان چھڑوانے کے لیے جانے والے نوجوان کو تشدد کا نشانہ بنا ڈالا اور تعارف کروانے پر الٹا حوالات میں بند کر دیا۔ بتایا گیا ہے کہ کو ٹ عبدالمالک کا رہائشی 25سالہ محمد رضوان ہائی کورٹ میں کام کرتا ہے وہ اپنے ایک دوست کی موٹر سائیکل کا چالان ہونے پر مغلپورہ سیکٹر میں چالان چھوڑانے گیا کہ چالان چھوڑانے کا وقت ختم ہونے پر ٹریفک وارڈن عامر کے ساتھ تلخ کالامی ہوگئی۔ جس پر ٹریفک وارڈن عامر نے اپنے ساتھی وارڈن عرفان کے ہمراہ نوجوان رضوان کو تشدد کا نشانہ بنانا شروع کر دیا اور نوجوان رضوان کے ہائی کورٹ لاہور میں ملازمت کرنے کا تعارف کروانے پر دونوں وارڈنز نے مزید تشدد کا نشانہ بنایا اور حوالات میں بند کر دیا اور رضوان کو بعد میں پتہ چلا کہ اس کے خلاف کار سرکار میں مداخلت کا مقدمہ درج کر دیا گیا ہے نوجوان رضوان نے کہا ہے کہ وارڈنز نے معمولی بات پر تشدد کانشانہ بنایا اور بعد میں ناجائز طور پر مقدمہ میں ملوث کردیا ۔ وزیر اعلی پنجاب ، آئی جی پنجاب اور سی سی پی او کو نوٹس لیکر مقدمہ کو خارج اور تشدد کرنے والے وارڈنز کے خلاف محکمانہ کارروائی کرنے کا حکم دیا جائے جبکہ اس حوالے سے ایس پی ٹریفک مغلپورہ سرکل فاتح عالم کا کہنا ہے کہ وارڈنز عامر اور عرفان کی سپیشل رپورٹ تیار کر کے سی ٹی او لاہور کو بھجوادی ہے اور انکوئری میں الزام ثابت ہونے پر دونوں وارڈنز کو معطل کر دیا جائے گا۔

مزید : پشاورصفحہ آخر /علاقائی


loading...