لوئر اورکزئی کلایہ خود کش بم دھماکے میں جاں بحق اور زخمی افراد کو امداد نہ مل سکی

لوئر اورکزئی کلایہ خود کش بم دھماکے میں جاں بحق اور زخمی افراد کو امداد نہ مل ...

ہنگو( بیورورپورٹ)تین ماہ قبل لوئر اورکزئی کلایہ خود کش بم دھماکے میں جاں بحق اور زخمی افراد کو امداد نہ مل سکا ، گورنر خیبرپختونخواہ شاہ فرمان اوروزیر مملکت برائے داخلہ شہریار خان آفریدی کے وعدے اعلانات تک محدود ،سانحہ کلایہ کے لواحقین کو صرف سیکورٹی فورسز کی جانب سے معاوضہ بروقت ملا ہے ۔ تفصیلات کے مطابق تین ماہ قبل 23نومبر2018بروز جمعہ کو لوئر اورکزئی کلایہ بازار میں خود کش بم دھماکہ ہوا تھا جس میں 34افراد جاں بحق اور56سے ذیادہ زخمی ہوئے تھے ۔دھماکے کے دوسرے روز گورنر خیبر پختونخواہ شاہ فرمان نے کور کمانڈر لیفٹیننٹ جنرل شاہین مظہر ،آئی جی ایف سی میجر جنرل نسیم کے ہمراہ جائے وقوعہ کا دورہ کیا تھا اور وہاں پر فی شہید کے لئے 10لاکھ روپے معمولی زخمی کیلئے ایک لاکھ روپے اور شدید زخمیوں کیلئے تین سے پانچ لاکھ روپے معاوضے کا اعلان کیا تھا اور پاک فوج کی جانب سے بھی معاوضے کا اعلان کیا گیا تھا اس کے بعد تیسرے روز وزیر مملکت برائے داخلہ شہریار آفریدی نے بھی جائے وقوعہ کا دورہ کیا تھا اور اسی طرح 10لاکھ اورپانچ لاکھ معاوضہ دینے کے اعلانات کئے تھے، سانحہ کلایہ کے لواحقین اور زخمیوں نے بتایا کہ پاک فوج کی جانب سے جو معاوضہ دینے کا اعلان کیا گیا تھا وہ بروقت مل گیا ہے مگر مرکزی حکومت وزیر مملکت برائے داخلہ شہر یار آفریدی اور گورنر خیبر پختونخواہ نے جو معاوضہ دینے کے اعلانات اور وعدے کئے تھے وہ تاحال ایفا نہ ہو سکے بلکہ صرف لفظی اعلانات ثابت ہوئے ہے۔ انہوں نے وزیر اعظم عمران خان، وزیر مملکت برائے داخلہ شہریار خان آفریدی اور گور نر شاہ فرمان سے مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ وہ اپنے اعلانات اور وعدے کی پاسداری کرتے ہوئے ہمیں جلد از جلد معاوضہ دیں بصورت دیگر ہم احتجاج کرنے پر مجبور ہوں گے۔

مزید : کراچی صفحہ اول


loading...