پاکستان استحکام کی جانب گامزن، مقبوضہ کشمیر بہت جلد ہمارا حصہ بنے گا: صدر مملکت

    پاکستان استحکام کی جانب گامزن، مقبوضہ کشمیر بہت جلد ہمارا حصہ بنے گا: صدر ...

  



لاہور (جنرل رپورٹر) صدر اسلامی جمہوریہ پاکستان ڈاکٹر عارف علوی نے کہا ہے کہ پاکستان مشکل دور سے نکل کر مضبوطی و استحکام کی جانب گامزن ہے اور انشاء اللہ مقبوضہ کشمیر بہت جلد پاکستان کا حصہ بنے گا، ہمارا مطالبہ ہے کہ ہندوستان مقبوضہ کشمیر کو دنیا کیلئے کھول دے اور وہاں اقوام متحدہ کے ملٹری آبزور گروپ تعینات کیے جائیں،دنیا بھر کے ممالک مہاجرین کو پناہ نہیں دیتے مگر 51لاکھ افغان مہاجرین کو اپنے ملک میں پناہ دی اور دنیا کی حالیہ تاریخ میں ایسی نظیر کہیں اور نہیں ملتی،پلوامہ واقعہ کے بعد جب بھارت نے جارحیت کی کوشش کی تو ہم نے ان کو منہ توڑ جواب دیا، ہم نے ان کا ایک جہاز گرا کر پائلٹ گرفتار کر لیا اور بعدازاں قیام امن کی خواہش کے تحت اسے واپس بھارت بھیج دیا، پاکستانی قوم اور افواج نے دہشتگردی پرقابو پایاجبکہ دنیا کی سپرپاور کئی ٹریلین ڈالر لگا کر بھی مشرق وسطیٰ میں امن نہ لا سکی۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے ایوان کارکنان تحریک پاکستان لاہور میں بارہویں سالانہ سہ روزہ نظریہئ پاکستان کانفرنس کے پہلے روز منعقدہ افتتاحی نشست سے بطور مہمان خاص اپنے خطاب میں کیا۔ اس کانفرنس کا کلیدی موضوع”کشمیر بنے گا پاکستان“ ہے۔ اس موقع پر تحریک پاکستان کے سرگرم کارکن اور وائس چیئرمین پروفیسر ڈاکٹر رفیق احمد، جسٹس(ر) خلیل الرحمن خان، میاں فاروق الطاف،ممتاز صنعتکار افتخار علی ملک، سینیٹر ولید اقبال، معروف سماجی و سیاسی رہنما بیگم مہناز رفیع، گولڈ میڈلسٹ کارکنان تحریک پاکستان سمیت مختلف شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والے خواتین و حضرات بڑی تعداد میں موجود تھے۔کانفرنس کا باقاعدہ آغاز تلاوت قرآن مجید‘ نعت رسول مقبول ؐ اورقومی ترانہ سے ہوا۔ تلاوت کی سعادت حافظ محمد عمر اشرف نے حاصل کی، معروف نعت خواں حافظ مرغوب احمد ہمدانی نے بارگاہ رسالت مآبؐ میں ہدیہئ عقیدت پیش کیا۔ پروگرام کی نظامت کے فرائض نظریہئ پاکستان ٹرسٹ کے سیکرٹری شاہدرشید نے اداکیے،صدر مملکت نے کہا کہ۔ نظریہئ پاکستان ٹرسٹ وطن عزیز کے اساسی نظریے کی ترویج و اشاعت‘ اس کے اسلامی نظریاتی تشخص کو اجاگر کرنے اور بانیان پاکستان کا فکری ورثہ نئی نسلوں تک منتقل کرنے کے ضمن میں جو خدمات سرانجام دے رہا ہے‘ اسے ہر محب وطن پاکستانی قدر کی نگاہوں سے دیکھتا ہے۔۔ میاں فاروق الطاف نے خطبہ استقبالیہ میں نظریہئ پاکستان ٹرسٹ کی جانب سے ڈاکٹر عارف علوی کا دل کی گہرائیوں سے شکریہ ادا کیا۔سینیٹر ولید اقبال نے اظہار تشکر کرتے ہوئے کہا کہ میں ڈاکٹر عارف علوی کا بے حد ممنون ہوں کہ وہ ہماری دعوت پر یہاں تشریف لا ئے۔پروگرام کے دوران بیگم مہناز رفیع نے اپنی تصنیف صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی کو پیش کی۔ بعدازاں پنجاب کی نجی جامعات کے مسائل کے حل کیلئے قائم کی گئی ایجوکیشن ریفارمز کمیٹی کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے صدر مملکت نے کہا کہ پرائیویٹ پبلک پارٹنر شپ کے تحت تعلیم کے شعبے میں ترقی کے بے پناہ مواقع موجود ہیں۔ صدر مملکت نے نجی شعبے کی کاوشوں کو سراہا اورکہا نجی اور سرکاری جامعات کے اشتراک سے آئندہ 3 سال میں پنجاب میں ہائر ایجوکیشن کے شعبے میں انقلاب برپا ہوسکتا ہے۔صدر مملکت نے زور دیا کہ جامعات میں ریسرچ گرانٹس رائٹنگ ٹریننگ کا کلچر پیدا کرنا ہوگا۔گورنر پنجاب چودھری سرور نے اس موقع پر کہا کہ پنجاب میں ہائر ایجوکیشن کے شعبے میں فروغ موجودہ حکومت کی ترجیحات میں شامل ہے اور حکومت نجی جامعات کے مسائل ون ونڈو کے ذریعے حل کرنے میں سنجیدہ ہے۔اس موقع پروزیر ہائر ایجوکیشن راجہ یاسر ہمایوں نے بتایا کہ آئی ٹی یونیورسٹی کے تمام پروفیسرز اس شعبے میں مہارت رکھتے ہیں اور انٹر پرینول ایکو سسٹم تمام یونیورسٹیوں میں ہونا چاہئے۔اس موقع پر نجی جامعات ایسوسی ایشن کے چیئرمین پروفیسر ڈاکٹر چودھری عبدالرحمان نے کہا کہ نجی جامعات پہلے ہی اس شعبے میں بہت کام کر رہی ہیں۔ سپیریئر یونیورسٹی اور گریژن یونیورسٹی لاہور نے مائیکرو سافٹ اور ہائر ایجوکیشن کمیشن کے اشتراک سے ہونے والے ایک مقابلے میں پہلی اور دوسری پوزیشن حاصل کی۔ انہوں نے بتایا کہ پرائیویٹ جامعات بین الاقوامی یونیورسٹیز کا مقابلہ کرنے کیلئے ہر دم تیار ہیں۔انہوں نے امید ظاہر کی کہ گورنر پنجاب چودھری سرور اور وزیر ہائر ایجوکیشن راجہ یاسر ہمایوں کی سرپرستی میں قائم ریفارمز کمیٹی ایسی ریفارمز لانے میں کامیاب ہو جائیں گی جس سے ہماری جامعات اگلے چند برسوں میں Q.Sریٹنگ میں نظر آئیں گی۔اجلاس میں اس بات پر اتفاق کیا گیا کہ نجی یونیورسٹیوں کو درپیش ابتدائی مسائل کمیٹی ایک ماہ میں حل کرے گی جبکہ اگلے 3 ماہ کے دوران مستقبل کا ایکشن پلان بنالیا جائے گا۔ اجلاس میں سیکرٹری ہائر ایجوکیشن پنجاب،نجی جامعات کی ایسوسی ایشن کے ترجمان میاں عمران مسعود،اویس رؤف اور میجر جنرل (ر) عبید زکریا بھی شریک ہوئے۔

صدرمملکت

مزید : صفحہ آخر