سندھ حکومت کا منشیات بحالی اداروں کو مزید بہتر بنانے کا فیصلہ

سندھ حکومت کا منشیات بحالی اداروں کو مزید بہتر بنانے کا فیصلہ

  



کراچی(سٹاف رپورٹر) چیف سیکریٹری سندھ سید ممتاز علی شاہ نے کہا ہے کہ صوبے میں منشیات بحالی اداروں کو مزید بہتر کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ تمام اداروں کو پابند بنایا جائے گا کہ وہ یکسان علاج اور ٹیکنیکل تربیت کریں۔ انہوں نے کہا کہ حکومت ان بحالی اداروں کو سندھ ہیلتھ کیئر کمیشن کے تحت رجسٹرڈ کیا جائے گا اور ان اداروں کو مالی امداد بھی فراہم کی جائے گی۔ تفصیلات کے مطابق سندھ میں منشیات کے عادی افراد کے لئے بحالی سینٹرز کو مزید مستحکم کرنے کا فیصلہ کیا گیا یہ فیصلہ چیف سیکریٹری سندھ سید ممتاز علی شاہ کی زیر صدارت اجلاس میں کیا گیا۔ اجلاس میں کمشنر کراچی افتخار شالوانی، ایڈیشنل آئی جی کراچی غلام نبی میمن، سیکریٹری سوشل ویلفیئر ڈاکٹر محمد نواز شیخ سمیت محکمہ جیل خانہ جات، رینجرز اور اے این ایف کے اہلکاروں نے شرکت کی۔ اجلاس میں صوبے میں کام کرنے والے مختلف منشیات بحالی اداروں کے نمائندوں نے بھی شرکت کی۔اجلاس میں اے این ایف اور پولیس کی جانب سے منشیات بحالی اداروں میں موجود سہولیات کے متعلق آگاہی دی۔ اجلاس میں بتایا گیا کہ پرائیویٹ منشیات بحالی اداروں کے ساتھ ساتھ محکمہ جیل جانا جات میں وقت 508 منشیات کے عادی قیدی ہیں جن میں سے سب سے زیادہ ملیر میں 140 قیدی ہیں۔ اجلاس میں بتایا گیا منشیات کے عادی افراد کو 3 مہینے کا کورس کروایا جاتا ہے پھر وہ واپس جب معاشرے میں جاتے ہیں کوئی روزگار اور ٹیکنیکل تربیت کی کمی کی وجہ سے پھر نشے کا عادی ہو جاتے ہیں۔ اجلاس میں چیف سیکریٹری سندھ سید ممتاز علی شاہ نے کہا کہ تمام بحالی اداروں کو سندھ ہیلتھ کیئر کمیشن کے طے کردہ یونیفارم کورس، ڈاکٹر، سائیکالوجسٹ اور اسٹاف رکھنا ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ حکومت سندھ ان اداروں کی مالی مدد، سیکیورٹی فراہم کرے گی اور ان اداروں کی رجسٹریشن سندھ ہیلتھ کیئر کمیشن کے زریعہ کی جائے گی۔ انہوں نے صوبے میں کام کرنے والی بحالی اداروں کی تفصیلات فراہم کرنے کا کہا اور محکمہ صحت اس رکارڈ کو چھان بین کرے گا۔ ممتاز علی شاہ نے کہا کے منشیات کے عادی افراد کی ووکیشنل ٹریننگ کے لئے بھی ایک یونیفارم کورس بنایا جائے گا جس کو اسٹیوٹا، ہنر فانڈیشن اور دیگر اداروں سے ٹریننگ کروائی جائے گی تا کے وہ بحالی کے بعد معاشرے میں جا کر زندگی بسر کر سکے۔ ممتاز علی شاہ سیکریٹری سوشل ویلفیئر کو ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ محکمہ سوشل ویلفیئر ان تمام منشیات بحالی کے اداروں کو بہتر بنانے کے لئے انکی مالی امداد، ڈاکٹروں کی کمی اور دیگر ضروریات کی تفصیل ایک ہفتے میں فراہم کرے۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر