پی ٹی وی بدترین مالی خسارے کا شکار

پی ٹی وی بدترین مالی خسارے کا شکار
 پی ٹی وی بدترین مالی خسارے کا شکار

  



لاہور(فلم رپورٹر)پاکستان ٹیلی وژن کارپوریشن کے دن بدن بگڑتے حالات سب کے سامنے ہیں۔عدالت میں جمع کروائے گئے اعداد و شمار کے مطابق قومی چینل 8 ارب سے زائد کے بدترین مالی خسارے کا شکار ہے، پاکستان ٹیلی وژن کارپوریشن کو ایک نئی زندگی دینے کا عزم لے کر آنے والے سابق منیجنگ ڈائریکٹر اور حاضر سروس چیئر مین ارشد خان نے پی ٹی وی کا جو حال کیا ہے وہ سب کے سامنے ہے۔ایسی صورتحال میں گزشتہ روز پی ٹی وی لاہور مرکز کے ترجمان کی جانب سے ایک ایسی مضحکہ خیز پریس ریلیز جاری کی گئی جس نے سب کو حیران کردیاغلط بیانیوں کے پلندہ اس پریس ریلیز کا متن کچھ اس طرح ہے کہ وزیراعظم عمران خان کے قومی اداروں میں میرٹ پر تعیناتی کا حکومتی وژن جس شفافیت کے ساتھ آگے بڑھ رہا ہے اس کے بہترین ثمرات سامنے آکر رہیں گے۔

اس سلسلے میں وزیر اعظم نے پی ٹی وی کے چیئرمین ارشد خان،منیجنگ ڈائریکٹر عامر منظور اور پی ٹی وی بورڈ کے اراکین کی میرٹ پر جو تقرریاں کی ہیں ان کے مثبت نتائج سامنے آنا شروع ہو گئے ہیں۔پی ٹی وی کے چیئرمین ارشد خان، منیجنگ ڈائریکٹر عامر منظور اور پی ٹی وی بورڈ قومی ادارے کو ترقی کی جانب گامزن کرنے اور مالی اعتبار سے مضبوط بنانے کے لئے رات دن کوشاں ہیں اور بہت جلد بہترین بزنس پلان پر عمل درآمد شروع ہو جائے گا۔موجودہ انتظامیہ کی بہترین حکمت علمی کے نتیجے میں گزشتہ چھ ماہ کے دوران پی ٹی وی ریونیو میں غیر معمولی اضافہ اور بے جا اخراجات میں حد درجہ کمی واقعہ ہوئی ہے۔پی ٹی وی کے کلیدی عہدوں پر جو شخصیات تعینات ہیں انہوں نے ماضی میں اپنی اعلی پیشہ وارنہ مہارت اور انتظامی صلاحیتوں کی بدولت عالمی سطح پر نام کمایا ہے۔اسی طرح پی ٹی وی بورڈ کے اراکین کا جس باریک بینی سے انتخاب کیا گیا وہ قابل تحسین ہے۔ایک قومی ادارے کے لئے ایسی باہنر شخصیات کی تقرری قومی ادارے کے لئے اعزاز اور ان کی صلاحتیوں کاکھلے دل سے اعتراف ہے۔ذرائع کے مطابق کے ان تمام باصلاحیت اور کلیدی عہدوں پر فائز ارشد خان،راشد خان،عامر منظور،صلاح الدین صلی،زوہیب خالق اور محمد علی بخاری سمیت سب افرادکی غیر قانونی تقرری پر عدالت نوٹس جاری کرچکی ہے جس کا فیصلہ 6مارچ کو متوقع ہے۔جبکہ ڈائریکٹر فنانس وسیم پرویز کو عدالت نے فارغ کردیا ہے۔

ذرائع کے مطابق ان کی ڈگری جعلی تھی۔یہ بھی معلوم ہوا ہے کہ ارشد خان جعلی ڈگریوں کے معاملہ کو بورڈ میٹنگ میں مسلسل ڈیفر کررہے ہیں جو کہ وزیراعظم کے سارے وژن کی نفی کرنے کے مترادف ہے پی ٹی وی کے چند سینئر کارکنان کا کہنا ہے کہ حالات اس کے برعکس ہیں ایسے میں اس قسم کی باتیں مذاق کے سوا کچھ نہیں۔اگر ریوینیو بڑھتا ہے تو کارکنان کو بونس سمیت دیگر مراعات دی جاتی ہیں جبکہ حالات کچھ اس طرح ہیں کہ کارکنان کو کئی سال سے دوا کے پیسے بھی میسر نہیں آئے اور یہ واحد وفاقی ادارہ ہے جس میں پانچ سال سے کسی ملازم کی تنخواہ نہیں بڑھی۔ مارکیٹنگ اور کانٹنٹ ہیڈ خاور اظہر اور چیف کمرشل آفیسر امین اختر کے پاس ان کے عہدوں کی اہلیت کے مطابق تعلیمی اسناد ہی نہیں ہیں۔

دوسری جانب قومی چینل پر پرائیویٹ پروڈکشنز کی بھرمار ہے۔پی ٹی وی لاہور مرکز کے ترجمان ان پروگراموں کے نام بتائیں جو مالی فائدے میں جا رہے ہیں جبکہ کراچی مرکز سے پیش کیا جانے والا مارننگ شو دو لاکھ کے قریب خسارے میں جا رہا ہے۔اس کی ریٹنگ نہ ہونے کے برابر ہے۔ہیڈ آف نیوز اینڈ کرنٹ افیئرزقطرینہ حسین اپنے موجودہ عہدے پر تعیناتی کی تعلیمی اہلیت ہی نہیں رکھتیں اور ان کی تقرری ہر اعتبار سے غیر قانی ہے۔دوسری جانب سول انجینئر طاہر مشتاق کو ہیومن ریسورس کا ہیڈٖ لگا دیا جس عہدہ کا سرے سے وجود ہی نہیں ہے۔ان تمام حقائق کی روشنی میں اس پریس ریلیز کی حقیقت سب کے سامنے ہے۔ یاد رہے کہ وزیر اعظم عمران خان کا وژن ہے کہ پی ٹی وی کا سنہری دور واپس لایا جائے اور یہ سب جانتے ہیں کہ پی ٹی وی کو عروج اس کے ان ہاؤس بنائے جانے والے ڈراموں کی وجہ سے ملا تھا۔ پی ٹی وی ہیڈ کوارٹر اور بڑے مراکز میں تعینات کنٹرولر اور منیجرکے عہدوں پر فائز سٹینو ٹائپسٹ،ٹیلیفون آپریٹر، اے سی ہیلپر، اورجونیئر کلرکی کا وسیع تجربہ رکھتے ہیں۔ایسے سطحی لوگوں سے گولڈن ایرا کی واپسی دیوانے کے خواب کے سوا کچھ نہیں۔بڑے مراکز کے منیجرز کی فرسودہ سوچ اور ان کاغیر پیشہ وارانہ رویہ پی ٹی وی کو زوال سے نکلنے نہیں دے رہا۔ذرائع کا یہ بھی کہنا ہے کہ اگر قومی چینل خسارے سے نکل گیا ہے تواس کے کئی منظور شدہ پروگرام کن وجوہات کی بنا پر شروع نہیں ہوسکے۔

مزید : رائے /کالم