کورونا وائرس کی وجہ سے عالمی منڈی میں سونے کی قیمتوں کو پَر لگ گئے

کورونا وائرس کی وجہ سے عالمی منڈی میں سونے کی قیمتوں کو پَر لگ گئے
کورونا وائرس کی وجہ سے عالمی منڈی میں سونے کی قیمتوں کو پَر لگ گئے

  



نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) چین سے پھیلنے والے خوفناک کورونا وائرس کی وجہ سے عالمی منڈی میں سونے کی قیمتوں کو پر لگ گئے۔ میل آن لائن کے مطابق وباءجوں جوں پھیل رہی ہے سرمایہ کار اس حوالے سے خوف میں مبتلا ہو رہے ہیں اور اپنے سرمائے کو محفوظ بنانے کے لیے سرمایہ کاری کے روایتی اور محفوظ ترین حربے کی طرف جا رہے ہیں جو کہ سونے کی خریداری ہے۔ سرمایہ کار زیادہ سے زیادہ سونا خرید رہے ہیں تاکہ اگر اس وباءکی وجہ سے دیگر مارکیٹس کو نقصان پہنچتا ہے تو سونا ایک ایسی چیز ہے جو محفوظ رہے گی۔

سرمایہ کاروں کے اسی رجحان کی وجہ سے سونے کی قیمتیں آسمان کو چھونے لگی ہیں اور گزشتہ سات سال کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی ہیں۔ رپورٹ کے مطابق یہ وائرس چین سے نکل کر دیگر درجنوں ممالک تک پہنچ چکا ہے اور یورپی ملک اٹلی میں بھی اس وائرس کی وجہ سے 6مزید ہلاکتیں ہو گئی ہیں ۔ یہی وجہ ہے کہ گزشتہ کئی دنوں سے یورپی سٹاک مارکیٹ شدید مندی کا شکار ہے۔ سرمایہ کار ایسے سیکٹرز سے تیزی سے سرمایہ نکال رہے ہیں جو کورونا وائرس سے متاثر ہو سکتے ہیں اور اس سرمائے کو سونے میں لگا رہے ہیں جس کی وجہ سے سونے کی قیمت بڑھتے بڑھتے 1300پاﺅنڈ (تقریباً 2لاکھ 59ہزار) فی اونس تک چلی گئی ہیں۔ کورونا کی وباءپھیلنے کے بعد سے یورپ کی ٹریول فرمز اور دیگر ایسے کمپنیوں سے 361ارب پاﺅنڈ سرمایہ نکالا جا چکا ہے اور اس سرمائے کی بڑی مقدار سونے کی خریداری میں لگا دی گئی ہے۔

مزید : بین الاقوامی