’مجھ سے ایک پرانی جاننے والی خاتون نے رابطہ کیا، بات شروع ہوئی تو۔۔۔‘ پاکستانی آدمی نے ایسے فراڈ کے بارے میں بتادیا کہ سن کر ہی سب چکرا جائیں

’مجھ سے ایک پرانی جاننے والی خاتون نے رابطہ کیا، بات شروع ہوئی تو۔۔۔‘ ...
’مجھ سے ایک پرانی جاننے والی خاتون نے رابطہ کیا، بات شروع ہوئی تو۔۔۔‘ پاکستانی آدمی نے ایسے فراڈ کے بارے میں بتادیا کہ سن کر ہی سب چکرا جائیں

  



اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) نوسرباز فراڈ کے نت نئے طریقے وضع کرتے ہیں۔ ایسی ہی نوسربازی کی ایک انوکھی واردات جواد علی بھٹی نامی اس نوجوان کے ساتھ ہوتے ہوتے رہ گئی اور وہ بھی صرف اس کی حاضر دماغی کی وجہ سے۔ جواد نے اپنی کہانی ویب سائٹ ’Reddit‘ پر بیان کی ہے تاکہ دیگر لوگ پڑھیں اور ایسے نوسربازوں سے بچیں۔ جواد لکھتا ہے کہ ”مجھ سے ایک روز لنکڈان پر میری ایک پرانی جاننے والی خاتون نے رابطہ کیا۔ ہم ایک جگہ اکٹھے جاب کر چکے تھے۔ سلام دعا کے بعد اس نے بتایا کہ وہ ایک بہت بڑے کاروبار سے منسلک ہے اور چاہتی ہے کہ میں بھی اس میں شامل ہو جاﺅں۔ میں نے کاروبار کی تفصیل پوچھی تو اس نے مجھ سے فون نمبر مانگ لیا تاکہ تفصیل سے بات ہو سکے۔ بعد ازاں اس نے مجھے فون پر معمولی تفصیل بتائی اور کہا کہ وہ مجھے اپنی سینئر پارٹنر کے ساتھ ملوانا چاہتی ہے تاکہ بات آگے بڑھ سکے۔ میں رضامند ہو گیا۔ اس نے اپنی اس پارٹنر کے متعلق تعریفوں کے بہت پل باندھے کہ وہ کیسے متوسط طبقے سے تھی اور کیسے کروڑ پتی بن گئی۔“

جواد نے مزید لکھا کہ ”ہماری ایک کافی شاپ میں ملاقات طے ہوئی اور میں وہاں پہنچ گیا۔ وہاں میری اس جاننے والی خاتون اور اس کی سینئر پارٹنر نے مجھے کاروبار کے فوائد بتانا شروع کر دیئے اور دو گھنٹے تک بولتی چلی گئیں لیکن کاروبار کیا ہے؟ یہ بتانے پر نہیں آ رہی تھیں۔ میں بار بار پوچھتا اور وہ بات گول مول کرکے پھر سے اپنی ڈگر پر چل پڑتیں۔ بالآخر جب انہوں نے سمجھا کہ میں کافی حد تک قائل ہو گیا ہوں تو انہوں نے مجھے بتایا کہ یہ ایک ای کامرس نیٹ ورک ہے جس کا وہ حصہ ہیں اور اگر میں تین سے سات ہزار ڈالر کی سرمایہ کاری کروں تو میں بھی ان کا پارٹنر بن سکتا ہوں۔ تب میرا ماتھا ٹھنکا کہ یہ تو بدنام زمانہ ’ایم ایل ایم‘ کمپنی کی طرز کا کوئی فراڈ ہے اور بعد ازاں میری بات درست نکلی۔ میں نے اپنے لوگوں سے مشورے کا بہانہ کیا اور وہاں سے نکل آیا لیکن اس خاتون نے مجھ سے فون پر رابطہ جاری رکھا۔ میں اسے معصوم سمجھ رہا تھا۔ میں سمجھ رہا تھا کہ وہ ان لوگوں کی باتوں میں آ کر پھنس چکی ہے۔ میں نے اسے حقیقت بتائی کہ یہ فراڈ کمپنی ہے اور اسے بھارت میں جرمانہ بھی ہو چکا ہے لیکن اس خاتون نے الٹا کمپنی کا دفاع کیا اور مجھے قائل کرنے کی کوشش جاری رکھی۔ وہ ویڈیوز اور دیگر ثبوتوں کے ساتھ مجھے قائل کرنے کی کوشش کر رہی تھی۔ اس کے پاس سابق امریکی صدر بل کلنٹن اور دیگر اہم شخصیات کی ویڈیوز تھیں جواس کمپنی کے حق میں بول رہے ہوتے ہیں۔ انجام کار میں نے اس خاتون کو اس کمپنی سے اپنا سرمایہ نکالنے اور بچنے کی آخری بار تلقین کی اور اس کا نمبر اپنے فون سے ڈیلیٹ کر دیا اور اسے اپنے واٹس ایپ اور سوشل میڈیا اکاﺅنٹس سے بلاک کر دیا۔ یوں میں اس فراڈ سے بال بال بچا۔ میں سوچ بھی نہیں سکتا تھا کہ میری اتنی پرانی جاننے والی خاتون یوں مجھے نوسربازی کا شکار بنانے کی کوشش کرے گی۔ میری جگہ اگر کوئی اور ہوتا تو شاید اب تک لٹ چکا ہوتا ۔“

مزید : ڈیلی بائیٹس /علاقائی /اسلام آباد