نیا پاکستان ہاؤسنگ پراجیکٹ کی اراضی کا ماحولیاتی تجزیہ کروانے کا حکم 

 نیا پاکستان ہاؤسنگ پراجیکٹ کی اراضی کا ماحولیاتی تجزیہ کروانے کا حکم 

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


لاہور(نامہ نگارخصوصی)لاہور ہائی کورٹ نے نیا پاکستان ہاؤسنگ پراجیکٹ کی اراضی کا ماحولیاتی تجزیہ جسٹس ریٹائرڈ علی اکبر قریشی کی نگرانی میں کروانے کا حکم دے دیا دوران سماعت فاضل جج نے قرار دیاکہ پہلے ہی لاہور ماحولیاتی آلودگی میں سب سے آگے ہے۔ مسٹرجسٹس شاہد کریم نے شیراز ذکا ایڈووکیٹ کی درخواست پر سماعت کی،درخواست گزار کے وکیل نے نکتہ اٹھایا کہ ماحولیاتی تجزیہ کے بغیر ہی حکومتی پراجیکٹس شروع کیے جارہے ہیں جس سے ماحولیاتی آلودگی میں اضافہ ہوگا، فاضل جج نے ایل ڈی اے کے رویہ پر ناراضی کا اظہارکرتے ہوئے سرکاری وکیل سے کہاکہ عدالت کو کلیئربتائیں کہ نیا پاکستان ہاؤسنگ پروجیکٹ ایل ڈی اے بنا رہا ہے یا نہیں؟ فاضل جج نے حکم دیاکہا کہ اب جسٹس ریٹائرڈ علی اکبر قریشی ماحولیاتی تجزیہ کا خود جائزہ لیں گے،عدالت نے ایل ڈی اے کو آج25فروری کو تفصیلات جمع کروانے کا حکم دیتے ہوئے سماعت ملتوی کردی،علاوہ ازیں فاضل جج نے ریمارکس دیئے کہ شہر میں بڑھتی ہوئے ماحولیاتی آلودگی پر گہری تشویش کا اظہار کیا اور ریمارکس دیئے کہ آلودگی کیلئے ٹھوس اقدامات نہ کرنا لاہور شہر سے زیادتی ہے،واٹر کمیشن کی جانب سے عدالت میں پیش کی جانے والی رپورٹ میں ماحولیاتی آلودگی سے پاک کرنے کے لئے اقدامات کے بارے میں آگاہ کیا گیا اور مزید اقدامات کرنے کی سفارش کی گئی ہے، کمیش نے رپورٹ میں بتایا کہ ماحولیاتی آلودگی کی وجہ سے لاہور شہر آلودہ ترین شہروں میں شمار ہو رہا ہے، کمیشن نے بتایا کہ 46 شوگر ملز کو ٹریٹمنٹ پلانٹ لگانے کے لئے 22 مارچ تک کی مہلت دے دی ہے۔
تجزیہ کروانے کاحکم

مزید :

صفحہ آخر -