چیف سیکرٹری، سیکرٹری لوکل گورنمنٹ اور ہاؤسنگ کو پیش ہونے کا حکم 

    چیف سیکرٹری، سیکرٹری لوکل گورنمنٹ اور ہاؤسنگ کو پیش ہونے کا حکم 

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


 لاہور(نامہ نگارخصوصی)چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ نے لاہور میں گرین ایریاز پر ہاؤسنگ سوسائٹیز کے قیام کیخلاف دائردرخواست پرحکم دیاہے کہ آئندہ ہرسماعت پرچیف سیکرٹری، سیکرٹری لوکل گورنمنٹ اور سیکرٹری ہاؤسنگ پیش ہوں گے،دوران سماعت فاضل جج نے چیئرمین ایل ڈی اے کی جانب سے رپورٹ پیش نہ کرنے پر برہمی کااظہارکیا،فاضل جج نے ریمارکس دیئے کہ چیئرمین ایل ڈی اے کی جانب سے جواب کیوں نہیں دیا گیا، فاضل جج نے پوچھا کہ کمیٹی کا کیا بنا جی بتائیں لاء افسر صاحب؟کیا ایسا شخص وزیر رہنے کے لائق ہے جو اپنی کمیٹی کی سربراہی نہیں کرسکتا، عدالتی احکامات پر عمل درآمد نہ ہونے سے غیر سنجیدگی ظاہر ہوتی ہے، کیا سوسائٹیز کی سکروٹنی کی جاچکی ہے؟ سیشن جج کی سربراہی میں کمیشن بنا رہا ہوں جو تمام سوسائٹیز کا ریکارڈ دیکھے گا، کس اتھارٹی، کس محکمے نے سوسائٹی منظور کیں سب بتائے گا،لاء افسروں کی مجبوری ہوتی ہے اعلیٰ حکام کی خوشنودی حاصل ہو، آپ تمام تفصیلات لائیں میں کمیشن بنا دوں گا، فاضل جج نے چیئرمین ایل ڈی اے کی جانب سے جواب مسترد کرتے ہوئے انہیں تفصیلی رپورٹ پیش کرنے کی ہدایت کی،سرکاری وکیل نے عدالت کو بتایا کہ 1241 لاہور میں ہاؤسنگ سوسائٹیز ہیں، 700سے زائد سوسائٹیز منظور شدہ ہیں، پرائیویٹ ہاؤسنگ سوسائٹیز نے سرکاری 1800سے زائد کنال اراضی شامل کررکھی ہے، سوسائٹیز بنانے والوں کی ذرائع آمدن کا کہیں سے پتہ نہیں چلا، فاضل جج نے کہا کہ آپ اس کے بارے میں تفصیلی رپورٹ تیار کرکے پیش کریں، جن ڈویلپرز نے غیر قانونی ہاؤسنگ سوسائٹیز بنائی،ان کو بھاری جرمانہ کیا جائے اوراس جرمانہ کی رقم سے لاہور شہر کے ساتھ ساتھ جنگلات لگائے جائیں، فاضل جج نے ایل ڈی اے کے وکیل سے کہا کہ چیئرمین کو کہیں پہلے میرے احکامات پر عمل درآمد کرے، ڈیپوٹیشن پر آنے والے افسروں بارے رپورٹ سے مطمئن نہیں، مجھے نتیجہ خیز اقدامات چاہیے اس پر کام کریں۔درخواست گزار کا موقف ہے کہ گرین ایریاز پر ہاؤسنگ سوسائٹیز کیخلاف بالکل کارروائی نہیں کی گئی، ان سوسائٹیوں کے اشتہارات ابھی تک میڈیا پر اور سوشل میڈیا پر چل رہے ہیں، ایل ڈی اے اور دوسرے محکمے عدالتی احکامات پر عملدرآمد نہیں کررہے۔
ہاؤسنگ سوسائٹیز

مزید :

صفحہ آخر -