صنعتی و تعلیمی شعبہ میں تعاون ملکی ترقی کے لئے ضروری قرار 

صنعتی و تعلیمی شعبہ میں تعاون ملکی ترقی کے لئے ضروری قرار 

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


کراچی (سٹاف رپورٹر)یونائیٹڈ انٹرنیشنل گروپ (یو آئی جی) کے چیئرمین میاں شاہداورپرنسپل ہیلی کالج آف بینکنگ اینڈ فنانس ڈاکٹر مبشر منور خان نے جمعہ کے روز صنعتی اور تعلیمی شعبہ میں روابط بڑھا کر ملکی ترقی یقینی بنانے کے لئے مفاہمت کی ایک یاداشت پر دستخط کئے۔ اس موقع پر دونوں اداروں کے اعلیٰ عہدیداران بھی موجود تھے۔ تقریب کے بعد میاں شاہد نے اپنے خطاب میں کہا کہ صنعت اور تعلیم کے شعبہ کے مابین روابط کو فروغ دینا معاشی ترقی میں اہم کردار ادا کر سکتا ہے۔ کاروباری برادری کی اکثریت کاروبار کرنے کے ایک قدیم ماڈل پر چل رہی ہے جس میں تحقیق کا فقدان ہے۔ اقتصادی ترقی کا نظریہ صنعت اور اکیڈمی کے مابین رابطے کے بغیر نامکمل ہے۔ میاں شاہد نے کہا کہ پاکستان میں اس وقت تقریباً 3.2 ملین ایس ایم ای کام کر رہے ہیں اورہلکی انجینئرنگ اور ہائی ٹیک صنعتوں کی برآمدات کا انحصاراسی شعبہ پر ہے۔ ایس ایم ایز کا حصہ جی ڈی پی کا تقریباً 40 فیصد ہے اور یہ روزگار پیدا کرنے کا سب سے بڑا ذریعہ بھی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کاروباری برادری اور تعلیمی اداروں کے درمیان ہمیشہ سے تعاون کی کمی رہی ہے جبکہ صنعتی کارکنوں کو دی جانے والی تربیت عالمی معیار کے مطابق نہیں ہوتی اور یہ صنعتی شعبہ کی ضروریات کو پورا کرنے میں ناکام رہتی ہے۔ ہمارے تعلیمی اداروں میں پڑھایا جانے والا نصاب بھی حالات کے موافق نہیں ہے جس میں تحقیق اور جدت پر بہت کم توجہ دی جاتی ہے۔ اسی وجہ سے ہماری بہت سی مصنوعات بین الاقوامی معیار پر پورا نہیں اترتی ہیں جس سے بین الاقوامی منڈیوں میں پاکستانی کاروباری اداروں کی ساکھ کو نقصان پہنچتا ہے۔ میاں شاہدنے کہا کہ پاکستان جیسی ترقی پذیر ممالک کو معاشی اصلاحات پر غور کرنے اور پائیدار ترقی کی پالیسیوں پر کام کرنے کی ضرورت ہے۔ اصلاحات سے معیشت کو وسائل کے موثر استعمال اور برآمدات میں اضافے میں مدد ملے گی۔