خلاف قانون طریقہ کارسے سیل کیے گئے گودام ڈی سیل کرنیکا حکم

خلاف قانون طریقہ کارسے سیل کیے گئے گودام ڈی سیل کرنیکا حکم

  

لاہور(نامہ نگارخصوصی)لاہور ہائیکورٹ کے مسٹر جسٹس عابد عزیز شیخ نے قرار دیاکہ قانون کے مطابق کام کرنے سے عدالتیں منع نہیں کرتیں مگر خلاف قانون طریقہ کار اختیار کرنا قابل برداشت نہیں۔فاضل جج نے یہ ریمارکس زبانی احکامات پرشوگر ملز کے گوداموں کو سیل کرنے کے خلاف دائر درخواست پردئیے۔فاضل عدالت نے سیل کئے گئے پتوکی شوگر ملز کے گوداموں کو ڈی سیل کرنے کا حکم دیتے ہوئے 15 روز میں تفصیلی جواب طلب کرلیا۔گزشتہ روز ملز انتظامیہ کے وکیل نے بتایا کہ ڈی سی اوکے زبانی احکامات پر ملز کے گوداموں سیل کیا گیاجبکہ قانون کے مطابق بغیر نوٹس جاری کئے ملزکے گوداموں کوسیل نہیں کیاجاسکتا۔گنے کا سیزن چل رہاہے گودام سیل کئے جانے سے کاروبارمتاثر ہورہا ہے لہذا عدالت گودام ڈی سیل کرنے کا حکم دے۔ اسسٹنٹ کمشنر پتوکی نواز گوندل نے عدالت کو بتایا کہ شوگر ملز انتظامیہ نے کسانوں سے گنا خرید کر قیمت ادانہیں کی جس کی وجہ سے کسان ایک ہجوم کی شکل میں ملزکے گیٹ پر جمع ہوئے اور خدشہ تھاکہ کوئی ہنگامہ نہ ہوجائے ملز کے گودام ایڈیشنل کین کمشنر کی موجودگی میں سیل کئے گئے۔جس پر فاضل عدالت نے قرار دیاکہ قانون کے مطابق کام کرنے سے عدالتیں منع نہیں کرتیں مگرخلاف قانون طریقہ کار اختیار کرنا قابل برداشت نہیں۔فاضل عدالت نے گوداموں کو ڈی سیل کرنے کا حکم دیتے ہوئے جواب طلب کرلیا۔

گودام ڈی سیل

مزید :

صفحہ آخر -