موبائل فونز کی بڑی سکرین کا کوئی فائدہ نہیں، چائنیز کمپنی کا دعویٰ

موبائل فونز کی بڑی سکرین کا کوئی فائدہ نہیں، چائنیز کمپنی کا دعویٰ

 لاہور (نیوز ڈیسک) موبائل ٹیکنالوجی کے موجودہ دور میں مختلف کمپنیوں کے درمیان مقابلے کا رجحان کئی گنا بڑھ گیا ہے اور ہر کمپنی کوشش کرتی ہے کہ وہ زیادہ سے زیادہ تیز، بہترین ہارڈوئیر، بڑی سے بڑی سکرین اور ایچ ڈی ریزو لوشن والے موبائل بنائیں۔ اینڈرائیڈ سمارف فونز کے مارکیٹ میں آنے کے بعد بڑی سکرین کے استعمال میں بے پناہ اضافہ ہوا ہے اور اس وجہ سے ہی ایپل کو بھی اپنے ’’سٹینڈرڈ‘‘ سائز سے ہٹ کر بڑی سکرین والے موبائل مارکیٹ میں لانے پڑے جبکہ اکثر کمپنیوں نے تو اپنے موبائل فونز میں بہترین ہارڈوئیر کے ساتھ 2K ( یعنی 1080p سے بھی زیادہ ریزولوشن والی) سکرینز کا استعمال کیا ہے تاہم مشہور چائینز کمپنی \"Huawei\" کے ایک ایگزیکٹو ’’یو چینگ ڈونگ‘‘ نے ان سکرینز کے استعمال کو ’’فضول‘‘ قرار دیا ہے اور کہا ہے کہ انسانی آنکھ 1080p سے زیادہ ریزولیشن میں موجود فرق کو نہیں بھانپ سکتی اس لئے موبائل فونز میں ان سکرینز کے استعمال کا کوئی فائدہ نہیں ہے۔ان کا کہنا تھا کہ انہوں نے دوسری چائینز کمپنیوں کے جدید ترین موبائل فونز پر کچھ ٹیسٹ کئے ہیں جن سے یہ بات سامنے آئی کہ زیادہ ریزولوشن والے موبائل فونز بیٹری پر انتہائی برا اثر ڈالتے ہیں اور پرفارمنس بھی متاثر ہوتی ہے کیونکہ ان میں استعمال کئے گئے پراسیسر اور گرافک چپس اتنی زیادہ ریزولیشن والی سکرینز کو سپورٹ کرنے کے قابل نہیں ہیں۔ ’’یو شینگ ڈونگ‘‘ کے خیالات سے اس بات کا اندازہ کیا جا سکتا ہے کہ \"Huawei\" کمپنی مستقبل میں اپنے کسی بھی سمارٹ فون میں 1080p ریزولوشن سے زیادہ والی سکرینز کا استعمال قطعی طور پر نہیں کرے گی تاہم وہ اس کوشش میں ضرور ہے کہ کسی نہ کسی طرح موبائل فونز کی بیٹری پاور میں مزید اضافہ کیاجا سکے۔

مزید : علاقائی