پاکستان کیساتھ تعلقات کا نیا دور چاہتے ہیں ،بھارت ،باتیں نہیں عمل چاہیے ،پاکستان

پاکستان کیساتھ تعلقات کا نیا دور چاہتے ہیں ،بھارت ،باتیں نہیں عمل چاہیے ...

                              اسلام آباد،نئی دہلی(اے این این) بھارت نے امریکی صدر کے دورے سے ایک روز قبل امن کا بگل بجا دیا،پاکستان کو بات چیت کی مشروط پیشکش،خطے میں امن کے لئے اپنی ذمہ داریوں سے فرار کی کوشش جبکہ مشیر خارجہ سرتاج عزیز نے واضح کیا ہے کہ اچھے تعلقات کی بھارتی خواہش کا اظہار صدراوباما کو خوش کرنے کیلئے ہے،خطے میں امن کے لئے صرف باتوں کی نہیں عملی اقدامات کی ضرورت ہے،بنیادی مسائل کو بات چیت میں شامل کئے بغیر مذاکرات کا کوئی فائدہ نہیں۔بھارتی میڈیا کے مطابق امریکی صدر باراک اوبامہ کے بھارت کے دورے سے ایک روز قبل نئی دہلی میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے بھارتی وزیر خارجہ سشما سورا ج نے کہا ہے کہ بھارتی میڈیا کے مطابق صحافیوں سے گفتگوکرتے ہوئے انھوں نے کہا کہ بھارت پاکستان اوربنگلہ دیش سمیت تمام پڑوسی ممالک کے ساتھ تعلقات کے نئے دورکاآغازکرناچاہتا ہے جس میں امن کیلئے کوششیں کی جا سکتی ہیں تاہم انھوں نے خبردارکیاکہ مذاکرات تشدد آمیزماحول میں نہیںہوسکتے یہ ناممکن ہے کہ ہم مذاکرات کابگل بجائیں اوردوسری طرف سے دھماکوں کی آوازیں نکلیں۔ا نھوں نے کہا کہ دنیا میں کوئی ایسا مسئلہ نہیں ہے جس کا حل نہیں لیکن ضرورت ہے کہ امن کے ماحول میں مذاکرات ہوں۔دریں اثناءوزیر اعظم کے مشیر برائے امور خارجہ سرتاج عزیز نے نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے سشما سوراج کے بیان کو غیر سنجیدہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ اچھے تعلقات کی بھارتی خواہش کا اظہار صدراوباما کو خوش کرنے کیلئے ہے۔خطے میں امن کے لئے صرف باتوں کی نہیں عملی اقدامات کی ضرورت ہے،بنیادی مسائل کو بات چیت میں شامل کئے بغیر مذاکرات کا کوئی فائدہ نہیں۔انھوں نے کہا پاکستان مذاکرات اور تعلقات میں بہتری کا حامی ہے بنیادی ایشوز پر گفتگو کے ذریعے مذاکراتی عمل کو آگے بڑھایا جا سکتا ہے۔انھوں نے کہا کہ پاک بھارت مذاکرات کسی بنیاد پر ہی شروع ہو سکتے ہیں۔مذکرات ہم نے نہیں خود بھارت نے ختم کئے تھے اور اب اسے ہی مذاکرات کی بحالی میں پہل کرنا ہو گی۔انھوں نے کہا کہ باتوں اور عمل میں فرق ہوتا ہے بھارت کا علاقائی امن و استحکام کیلئے کردار کسی سے ڈھکا چھپا نہیں ،ہم ہمیشہ بنیادی ایشوز پر مذاکرات کے حامی رہے ہیں ۔

مزید : صفحہ اول