پاکستان میں بجٹ سازی کے مروجہ طریقہ کار پر شدید تحفظات کا اظہار

پاکستان میں بجٹ سازی کے مروجہ طریقہ کار پر شدید تحفظات کا اظہار

  



بونیر(ڈسٹرکٹ رپورٹر)سیٹیزن نیٹ ورک فاربجٹ اکاونٹی بیلٹی۔سی این بی اے کی جانب سے پاکستان میں بجٹ سازی کے مروجہ طریقہ کار پر شدید تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے اس عمل میں بہتری لانے کے لئے چار ٹر اف ڈیمانڈ پیش کردیا۔جسکے مطابق بجٹ سازی کے عمل کو شفاف عوامی رائے اور علاقائی ضروریات کے مطابق ترتیب دیا جائے۔اس سلسلے میں بونیر پریس کلب میں سی این بی اے پارٹنر تنظیم آرڈی او کے ایگزیکٹیو ڈائریکٹر حکیم ذادہ نے پریس کانفرنس کے دوران بتایا کہ سی این بی اے نے ہمیشہ ایسے معاملات اٹھائے ہے۔جو بجٹ سازی کو کو بہتر اور موثر بنانے کے لئے حکومت کی توجہ کے متقاضی ہیں۔حکیم ذادہ نے چار ٹر اف ڈیمانڈ کے اہم نکات پیش کرتے ہوئے بتایاکہ ترقیاتی بندی علاقوں کی ضروریات کے مطابق کی جانی چاہئے۔وفاقی حکومت ٹیکس دہندہ گان کے حقوق کے بل فوری طور پر منظور کرے۔بجٹ دستاویزات میں شفافیت لانے کے لئے مجوزہ ٹیکس اور اخراجات کے تمام اقدامات کی مکمل تفصیلات فراہم کرے۔بجٹ دستاویزات قومی زبان اردو میں اور کم سے کم ہونی چاہئے۔تاکہ عام شہری اس سے استفاد ہ کرسکے۔انہوں نے کہا کہ شہریوں پر بلاواسطہ ٹیکسوں کوکم کیا جائے۔خسارہ میں چلنے والے اداروں کو ٹھیک کیا جائے۔ایف بی ار میں فوری اصلاحات کی جائے۔انہوں نے کہا کہ چار ٹراف ڈیمانڈ مختلف سٹیک ہولڈر ز کے ساتھ مل کر بنائی گئی ہے اور ہم امید کرتے ہے کہ ان عمل درامد ہونے سے سفارشات زیادہ شفافیت جوابدہی سے بھر پور اور ایک کارامد بجٹ کو وجود میں لانے کا باعث بن سکتاہے۔اس موقع پر مختلف تنظیموں کے نمائندہ گان نے پیش کئے گئے چار ٹراف ڈیمانڈ میں شامل تمام مطالبات کی بھر پور حمایت کی اور کہاکہ اس اواز کو ضلعی سطح پر اٹھانے میں ہم بھرپور تعاون کریں گے۔

مزید : پشاورصفحہ آخر