آئیے مسکرائیں

آئیے مسکرائیں

  



٭استاد (دو لڑکوں سے): "ارے! آپس میں سر کیوں ٹکرا رہے ہو؟"

ایک لڑکا: "جناب! آپ ہی نے تو کہا تھا کہ ریاضی میں پاس ہونے کے لیے دماغ لڑانا ضروری ہے۔"

٭مہمان (چھٹا کینو لیتے ہوئے میزبان سے): "اجی، کیا بتاؤں میری نظر تو بہت کمزور ہے۔"

میزبان (جل کر): "جی ہاں! جبھی آپ کینوؤں کو انگور سمجھ کر کھا رہے ہیں۔"

٭مجسٹریٹ (جیب کترے سے): "تم نے اس آدمی کی جیب سے بٹوہ کس طرح نکال لیا؟"

جیب کترا (تن کر): اس علم کو سکھانے کی فیس پانچ سو رپے ہے۔"

٭ڈاکٹر (نوکر سے): "دیکھو دروازے پر کون آیا ہے۔"

نوکر: "کوئی مریض ہوگا!"

ڈاکٹر: "جاؤ معلوم کرو مریض نیا ہے یا پرانا۔"

نوکر: "نیا ہی ہوگا۔ آپ کے پاس آکر پرانا تو مشکل ہی سے بچتا ہے۔"

٭جیل کا داروغہ (قیدی سے): "معاف کرنا، میں نے تمہیں چار دن زیادہ قید میں رکھا۔"

قیدی: " کوئی بات نہیں۔ آئندہ آؤں تو چار دن پہلے رہا کردینا۔"

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

باپ بیٹے سے:

اگر اس بار تم فیل ہوے تو مجھے اپنا باپ مت کہنا۔

اگلے دن باپ:

کیا بنا رزلٹ کا؟

بیٹا:

بس "بشیر صاحب" کچھ مت پوچھیں۔۔۔

مزید : ایڈیشن 2