ُُپی ٹی آئی کے کارکن بند کمروں میں ماتم ضرور کرتے ہونگے: وزیراعلٰی سندھ

ُُپی ٹی آئی کے کارکن بند کمروں میں ماتم ضرور کرتے ہونگے: وزیراعلٰی سندھ

  



خیرپور(این این آئی) وزیر اعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے کہا ہے کہ پی ٹی آئی کے ورکر اور سپورٹرز عوام کے سامنے نہیں مگربند کمروں میں ماتم ضرور کرتے ہونگے کہ ہم کس چکر میں پھنس گئے ہیں، ٹرانسپرنسی انٹرنیشنل کی بدعنوانی رپورٹ کے بعد تبدیلی سرکار کی سال سوا سال کی کارکردگی سب کے سامنے واضح ہوچکی ہے۔ پیپلزپارٹی ہی واحد جماعت جو بلاول بھٹو زرداری اور آصف علی زرداری کی قیادت میں پاکستان کو مستحکم کرسکتی ہے جس طرح 2008 میں مشکل وقت میں پاکستان کو مستحکم کیا۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے وسان ہاؤس خیرپور پہنچ کر معاون خصوصی حاجی نواب علی وسان کی والدہ کے انتقال پر ان سے تعزیت کے بعد میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کیا۔ اس موقع پر صوبائی وزراء مکیش کمار چاؤلہ، خاص معان مرتضیٰ وہاب،شرجیل انعام میمن، فیاض بٹ، منور وسان، فدا وسان اور دیگر موجود تھے۔ خیرپور اور دیگر علاقوں میں بدامنی کے سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ صوبے میں امن و امان کے قیام کے لیے پولیس اہلکار وں کی جانب دی جانے والی قربانیاں کچھ نااہل افسران کی وجہ سے رائیگاں ہونے نہیں دی جائیں گی سندھ کابینہ نے متفقہ فیصلہ کیا ہے عوام کی منتخب حکومتی پالیسیوں پر عمل درآمد کرنا ہر سرکاری ملازم کا فرض ہے کیونکہ وہ عوام کے خادم ہیں اور ہم عوام کے منتخب نمائندے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ اگر بدامنی کا مسئلہ ہورہا ہے تو کیا حکومتی نمائندے پولیس افسران سے وسوال بھی نہیں کرسکتے ہمیں ییس مین نہیں بلکہ ایسا آفیسر چاہیے جو صوبے میں امن و امان کی صورتحال کو برقرار رکھے اور عوام کی خدمت کرے کیونکہ وہ عوام کے خادم ہیں۔ وزیر اعلیٰ سندھ کا کہنا تھا کہ منتخب عوامی نمائندوں پر الزام لگانے والے پولیس افسران کا معاملہ کلیئر ہوگیا ہے انہی پولیس آفیسرزنے ایک ہی گاؤں کے 22 افراد کے خلاف اے ٹی سی میں کیس بنایا، جن میں سے 5 یا 6 افراد تو ملک میں ہی نہیں تھے ایسے نااہل آفیسر کی بات سمجھ سے باہر ہے اس کے باوجود ہم ہر طرح کی انکوائری کے لیے تیار ہیں ابھی انکوائری پولیس کے پاس ہے مجھ تک نہیں پہنچی ہے جس آفیسر کے خلاف میں نے 4 ماہ قبل انکوائری کی ہدایت کی تھی وہ مجھ تک غیر سرکاری طور پر پہنچی ہے اگر نا اہل آفیسر کو بچایا جائے گا تو بدامنی تو پھیلے گی نااہل آفیسر اپنی نا اہلی چھپانے کے لیے عوامی نمائندوں پر الزامات لگا رہے ہیں جو عوام کی تذلیل ہے۔ خیرپور میڈیکل کالج کے لوئر اسٹاف کو مستقل نے کرنے کے سوال کے جواب میں وزیر اعلیٰ سند ھ سید مراد علی شاہ نے کہا کہ تمام معاملات مرحلہ وار حل کیے جائیں گے خیرپور میڈیکل کالج کی پی ایم ڈی سی سے رجسٹریشن چیلنج تھا جس پر سندھ حکومت نے اپنا بھرپور فرض نبھایا اور اللہ کا شکر ہے کہ کالج کی رجسٹریشن مل گئی ہے بعد میں وزیر اعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے رانی پور پہنچ کر پیر آف رانی پور پیر سید غلام غوث شاہ جیلانی عرف بگن شاہ کی وفات پر رکن قومی اسمبلی پیر سید فضل علی شاہ جیلانی اور رکن سندھ اسمبلی پیر سید احمد رضا شاہ سے تعزیت کی اور فاتحہ خوانی کی اس موقع پر صوبائی وزراء مکیش کمار چاؤلہ، خاص معان مرتضیٰ وہاب،شرجیل انعام میمن، فیاض بٹ اور دیگر موجود تھے۔

مزید : صفحہ اول