عرب شہزادوں کی جانب سے پاکستان میں تلوروں کا قتلِ عام

عرب شہزادوں کی جانب سے پاکستان میں تلوروں کا قتلِ عام
عرب شہزادوں کی جانب سے پاکستان میں تلوروں کا قتلِ عام

  



کراچی(مانیٹرنگ ڈیسک) تحریک انصاف جب حکومت میں تھی تو اس کے رہنماﺅں کی طرف سے عرب شہزادوں کے پاکستان آ کر تلوروں کا شکار کرنے پر خوب تنقید کی جاتی تھی لیکن اب خود تحریک انصاف کی حکومت میں عرب شہزادے پاکستان پہنچے ہوئے ہیں اور تلوروں کا قتل عام کر رہے ہیں۔ ایکسپریس ٹربیون کے مطابق تلور کواگرچہ ایسے پرندوں کی فہرست میں شامل کیا جا چکا ہے جن کی نسل ختم ہونے کا خطرہ ہے اس کے باوجود پاکستان میں عرب شہزادے شکار کر رہے ہیں اور سینکڑوں تلور اب تک موت کے گھاٹ اتارے جا چکے ہیں۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ اگرچہ تلور کے شکار کا سیزن نومبر میں شروع ہوتا ہے لیکن وفاقی حکومت نے وزارت خارجہ کے ذریعے سعودی عرب، متحدہ عرب امارات، قطر، بحرین اور دیگر عرب ممالک کے شہزادوں کو 50لائسنس جاری کروا دیئے ہیں۔ حکومتی ذرائع کے مطابق تازہ ترین لائسنس دبئی پولیس اینڈ جنرل سکیورٹی کے ڈپٹی چیف میجر جنرل شیخ احمدبن راشد المختوم کو جاری کیا گیا ہے جو دبئی کی حکمران فیملی کے فرد ہیں۔

شیخ احمد بن راشد المختوم کو گزشتہ ہفتے صحرائے تھر میں تلورکے شکار کا لائسنس جاری کیا گیا۔ عام طور پر ان شہزادوں کو 10دن کا پرمٹ دیا جاتا ہے جس دوران وہ 100تلور شکار کر سکتے ہیں۔ چنانچہ اس اعتبار سے عربی شہزادے نومبر سے اب تک 2سے 3ہزار تلور مار چکے ہیں۔ تاہم مقامی حکام کا کہنا ہے کہ شکار کیے گئے تلوروں کی تعداد اس سے کہیں زیادہ ہو سکتی ہے کیونکہ شکاری ہمیشہ 100پرندوں کی پابندی پر عمل نہیں کرتے۔

مزید : ڈیلی بائیٹس /عرب دنیا /علاقائی /سندھ /کراچی