بی آئی ایس پی ،ملتان میں بدعنوان عناصر کےخلاف شکنجہ تیار

 بی آئی ایس پی ،ملتان میں بدعنوان عناصر کےخلاف شکنجہ تیار

  

 ملتان(خصو صی پورٹر)چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ مسٹر جسٹس محمد امیر بھٹی کی ہدایات پر بینظیر انکم سپورٹ پروگرام (BISP) نے مستحق خواتین کو بائیو میٹرک ATM کی عدم دستیابی کے معاملے کانوٹس لےلیا ہے۔ ہدایات کے مطابق، اس بات کو یقینی بنایا گیا ہے کہ ملتان ریجن میں ایچ بی ایل کے 149اے ٹی ایمز24 گھنٹے کیلئے بائیو میٹرک طور پر فعال ہیں تاکہ بی آئی ایس پی کے مستحقین کو نقد رقم نکالنے کی سہولت فراہم کی جا سکے۔مزید برآں اے ٹی ایمز اور پی او ایس ایجنٹس کے ذریعے بی آئی ایس پی کے مستحقین سے بدعنوانی اور غیر قانونی کٹوتیوں(بقیہ نمبر4صفحہ6پر )

 میں ملوث مافیا کے خلاف بڑے پیمانے پر کریک ڈان کیا گیاہے ، تاکہ مستحقین میں بی آئی ایس پی فنڈز کی شفاف تقسیم کو یقینی بنایا جا سکے۔عدالت عالیہ کی ہدایت پر ڈائریکٹر جنرل بی آئی ایس پی پنجاب، زونل ڈائریکٹر ساتھ اور دیگر حکام ذاتی طور پر بی آئی ایس پی فنڈز کی تقسیم کی نگرانی کے لیے فیلڈ وزٹ کر رہے ہیں۔بی آئی ایس پی پنجاب کی حالیہ رپورٹ کے مطابق، پنجاب ریجن نے 312 پی او ایس ایجنٹس کو شکایات کی بنیاد پر بلاک کیا ہے، جن میں سے 30 ایف آئی آر مقامی تھانوں میں درج کرائی گئی ہیں اور 01 کیس ایف آئی اے سائبر کرائم سرکل لاہور کو بھیجا گیا ہے ، جبکہ 19 پی او ایس ایجنٹس کو حوالات میں بند کر دیا گیا ہے۔ڈائریکٹر جنرل بی آئی ایس پی پنجاب، ارشد لیاقت چودھری نے بی آئی ایس پی مستحقین کو تاکید کی ہے کہ وہ بائیو میٹرک تصدیق کے ذریعے ایچ بی ایل اے ٹی ایم سے اپنی پوری رقم وصول کریں۔رقوم میں کٹوٹی یا کسی بھی شکایت کی صورت میں قریبی بی آئی ایس پی دفتر سے رجوع کریں۔ ڈی جی پنجاب نے کہا کہ جو بھی شخص بدعنوانی میں ملوث پایا گیا اس کے خلاف سخت قانونی کارروائی کی جائے گی۔ انہوں نے مزید کہا کہ بی آئی ایس پی سے مستفید ہونے والوں کے لیے ایک خصوصی کنٹرول روم قائم کیا گیا ہے جہاں ان کی شکایات اور سوالات واٹس ایپ نمبر پنجاب 0325-5365520 یا BISP زونل آفس کے شکایت سیل نمبر 061-6214200 پر حل کیے جائیں گے۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -