دریا   سے ایک ہی خاندان کے 7 افراد کی لاشیں برآمد،  پولیس کا دل دہلا دینے والا انکشاف

دریا   سے ایک ہی خاندان کے 7 افراد کی لاشیں برآمد،  پولیس کا دل دہلا دینے والا ...
دریا   سے ایک ہی خاندان کے 7 افراد کی لاشیں برآمد،  پولیس کا دل دہلا دینے والا انکشاف
سورس: Wikimedia Commons

  

پونے (ڈیلی پاکستان آن لائن) بھارتی ریاست مہاراشٹر کے شہر پونے میں دریا سے ایک ہی خاندان کے 7 افراد کی لاشیں ملنے کی تحقیقات کے دوران انکشاف ہوا ہے کہ انہیں مبینہ طور پر انہی کے رشتے داروں نے قتل کیا ہے۔ 

"این ڈی ٹی وی" کے مطابق  18 جنوری اور 24 جنوری کے درمیان مہاراشٹر کے ضلع  پونے  کی تحصیل  دوئند میں  موہن پوار (45)، ان کی بیوی سنگیتا موہن (40)، ان کی بیٹی رانی پھولواری (24)، داماد شیام پھلوار (28) اور 3 سے 7 سال کے درمیان کے3 بچے بھیما دریا  کے کنارے مردہ پائے گئے تھے۔

ایک اہلکار نے بتایا کہ پولیس نے  مقتول موہن پوار کے کزن پانچ بہن بھائیوں  اشوک کلیان پوار، شیام کلیان پوار، شنکر کلیان پوار، پرکاش کلیان پوار اور کانتا بائی سرجیراؤ جادھو کو گرفتار کیا ہے ۔ پونے دیہی پولیس سپرنٹنڈنٹ انکت گوئل نے کہا کہ تحقیقات کے دوران کچھ حقائق سامنے آئے جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ تمام مرنے والوں کو قتل کیا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ابتدائی طور پر یہ سامنے آیا ہے کہ ملزم اشوک پوار کے بیٹے دھننجے پوار کی چند ماہ قبل ایک حادثے میں موت ہو گئی تھی اور اس سے متعلق ایک مقدمہ پونے شہر میں درج کیا گیا تھا۔ابتدائی تحقیقات سے پتہ چلتا ہے کہ اشوک ناراض تھا اور اس نے موہن کے بیٹے کو دھننجے کی موت کا ذمہ دار ٹھہرایا تھا۔ اشوک کے بیٹے کی موت کا بدلہ لینے کے لیے ہی  ان سات لوگوں کو مارا گیا۔

انہوں نے کہا کہ تمام ملزمان کو ضلع  احمد نگر کی تحصیل پارنر سے گرفتار کیا گیا اور ان کے خلاف تعزیرات ہند کی دفعہ 302 (قتل) اور 120B (مجرمانہ سازش) کے تحت مقدمہ درج کیا گیا ہے۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -جرم و انصاف -