ڈکیتی کے شبہ میں زیر حراست نوجوان پر پولیس کا بدترین تشدد

ڈکیتی کے شبہ میں زیر حراست نوجوان پر پولیس کا بدترین تشدد

  

لاہور ( وقائع نگار خصوصی) ٹاﺅن شپ پولیس نے ڈکیتی کے شبہ میں زیرحراست بائیس سالہ نوجوان کو بدترین تشدد کا نشانہ بنایا جس کی وجہ سے اس کی حالت بگڑ نے پر پولیس نے اسے طبی امداد کیلئے ہسپتال میں داخل کروا دیا ہے جہاں مذکورہ نوجوان کے ورثاءکے پہنچنے پر پولیس اسے گاڑی میں ڈال کر نامعلوم مقام پر لے گئی جس پر انہوں نے پولیس کے خلاف شدید احتجاج کرتے ہوئے اعلیٰ افسران سے کارروائی کا مطالبہ کیا ہے ۔ معلوم ہوا ہے کہ ماڈل ٹاﺅن لنک روڈ کے رہائشی بائیس سالہ عظمت علی کو ٹاﺅن شپ پولیس نے مبینہ طور پر ڈکیتی کے الزام میں پکڑا اور اسے بدترین تشدد کا نشانہ بنایاتو عظمت کی حالت بگڑ گئی جس پر پولیس اسے طبی امداد کیلئے جناح ہسپتال لے آئی، جہاں پر ڈاکٹروں نے اس کو طبی امداد دینے کے بعد اس کے گھر والوں کو اطلاع کی تو عظمت کے لواحقین فوری طور پر وہاں پہنچ گئے تو پولیس اسے بازو میں لگی ڈرپ سمیت گاڑی میں ڈال کرنامعلوم مقام پر لے گئی۔ بعدازاں عظمت کے اہلخانہ نے ٹاﺅن شپ پولیس تشدد کے خلاف زبردست احتجاج کرتے ہوئے اعلیٰ پولیس حکام سے اپیل کی ہے کہ وہ پولیس کے خلاف سخت کارروائی عمل میں لائیں۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -