ڈریپ نے ڈاکٹرز کو مریضوں کیلئے نسخے پر ہربل اور متبادل ادویات لکھنے سے روک دیا

ڈریپ نے ڈاکٹرز کو مریضوں کیلئے نسخے پر ہربل اور متبادل ادویات لکھنے سے روک ...

  

لاہور(جنرل رپورٹر،آئی این پی) ڈرگ ریگولیٹری اتھارٹی نے ڈاکٹرز کو نسخہ میں ہربل اور متبادل ادویات لکھنے سے روک دیا اور کہا عالمی ادارہ صحت کے قوانین کی روشنی میں ہربل اور آلٹرنیٹیو ادویات کو نسخہ پر نہیں لکھا جا سکتا۔ تفصیلات کے مطابق ڈرگ ریگولیٹری اتھارٹی نے ڈاکٹرز کو نسخہ پر ہربل اور متبادل ادویات لکھنے سے روکتے ہوئے ملک بھر کے ڈاکٹرز کو نیوٹراسیوٹیکل، ہربل، کاسمیٹکس اور الٹر نیٹیو ادویات پر پابندی کا مراسلہ جا ری کر دیا۔ مراسلے میں کہا گیا ہے ہر بل اور متبادل ادویات جنرل پروڈکٹ ہیں، جو نسخہ پر نہیں لکھی جا سکتی، ڈاکٹرز ہربل اور آلٹرنیٹیو ادویات کو رجسٹرڈ نسخہ پر لکھتے ہیں جس کی وجہ مریض خریدنے پر مجبور ہیں۔ ڈریپ کے اعلان کے مطابق ڈاکٹروں کے ہربل ادویات مریضوں کو تجویز کر کے دینے پر پابندی عائد ہوگی۔ دوسری جانب صدر ینگ فارماسسٹ لائیرز فورم پاکستان نور مہر کا کہنا ہے ڈر یپ کا خط کہ ڈاکٹر نسخہ میں او ٹی سی پر پابندی بالکل غیر قانونی ایڈوا ئز ر ی ہیں، ڈاکٹر پی ایم ڈی سی کے ماتحت ہیں، نہ کہ ڈریپ کے، ڈریپ کا موجودہ خط ڈریپ ایکٹ 2012ء کے منافی ہے۔ ڈاکٹر جو بھی نسخہ پر مریض کیلئے ضروری سمجھیں لکھ سکتے ہیں،ڈریپ کے OTC نیوٹرا ہربل کے لائسنس Form 6 میں یہ ادویات اعلاج کیلئے تجویز کی ہیں، اس حوالے سے ینگ ڈاکٹرز ایسوسی ایشن پنجاب کے چیئرمین ڈاکٹر محمود الحسن سید نے کہا ڈریپ کا یہ نوٹیفکیشن اور مراسلہ غیر آئینی ہے،پنجاب میڈیکل ٹیچرز ایسوسی ایشن کے صدر پروفیسر ڈاکٹر محمد امجد سے با ت کی گئی تو انہوں نے کہا ہم ڈریپ کو جواب دہ نہیں۔ڈریپ کون ہوتی ہے ڈاکٹر کو ہدایات جاری کرنیوالی کہ وہ کون سی اد و یات نسخے میں لکھے یا کونسی نہیں۔ اگر نیوٹراسیوٹیکل اور ہربل ادویات غلط ہے تو انہیں رجسٹرڈ کیوں کیا گیا ان کی فیکٹریاں کیوں لگائی گئیں، ڈاکٹر کسی بھی مریض کے نسخے میں وہی میڈیسن تجویز کرتا ہے جو مریض کیلئے فائدہ مند ہوتی ہیں اور رجسٹرڈ ہوتی ہیں ڈریپ کا جاری کردہ مراسلہ حقائق کے منافی ہے۔

ڈریپ

مزید :

صفحہ اول -