کورونا وائرس کی صورتحال کے دوران قومی ٹیم کو انگلینڈ بھیجنے کا فیصلہ کیوں کیا گیا؟ وسیم خان نے جواب دیدیا

کورونا وائرس کی صورتحال کے دوران قومی ٹیم کو انگلینڈ بھیجنے کا فیصلہ کیوں ...
کورونا وائرس کی صورتحال کے دوران قومی ٹیم کو انگلینڈ بھیجنے کا فیصلہ کیوں کیا گیا؟ وسیم خان نے جواب دیدیا

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) کے چیف ایگزیکٹو آفیسر (سی ای او) وسیم خان نے کہا ہے کہ پاکستان کرکٹ ٹیم کو انگلینڈ بھیجنے کا فیصلہ بہت مشکل تھا کیونکہ کرکٹرز کے کوویڈ 19 ٹیسٹ مثبت آنے کے بعد ہم ذہنی دباؤ کا شکار ہو گئے تھے۔

تفصیلات کے مطابق وسیم خان نے نجی خبر رساں ادارے کو دئیے گئے انٹرویو میں کہا کہ جب انگلینڈ اینڈ ویلز کرکٹ بورڈ (ای سی بی) سے پاکستان ٹیم کے دورے کے حوالے سے بات چیت جاری تھی تو اس وقت بھی یہی ذہن میں تھا کہ پازیٹو سوچ کے ساتھ فیصلہ کیا جائے گا، ای سی بی کے ساتھ میٹنگز کیں، کھلاڑیوں کی رائے لی گئی اور پھر فیصلہ کیا کہ ٹیم کو انگلینڈ بھیجنا ہے، اگرچہ ٹیم کو انگلینڈ بھیجنے کا فیصلہ بہت مشکل تھا اور پھر جب کوویڈ 19 ٹیسٹنگ کا عمل شروع ہوا اور کچھ کرکٹرز کے ٹیسٹ مثبت آگئے تو ہم ذہنی دبا ؤکا شکار ہو گئے تھے۔

انہوں نے کہا کہ وہ وقت پی سی بی کیلئے ایک مشکل وقت تھا، کھلاڑیوں سے بات کی، وہ اچھی سپرٹ میں تھے کیونکہ وہ کرکٹ کھیلنا چاہتے تھے، ان کی خواہش بھی تھی کہ کرکٹ کی سرگرمیاں اب بحال ہونی چاہئیں اس لئے اس سے بھی فیصلہ کرنے میں آسانی ہو ئی۔

چیف ایگزیکٹو کا کہنا تھا کہ ہم سے پہلے ویسٹ انڈیز نے انگلینڈ جانے کا فیصلہ کیا اور اس کی وجہ سے بھی ہمیں آسانی ہوئی، ہمیں چیزوں کا جائزہ لینے کا موقع ملا، ویسٹ انڈیز نے جب انگلینڈ جا کر سیریز کھیلنے کا فیصلہ کیا تو اس وقت انگلینڈ میں حالات زیادہ خراب تھے، ہمیں پوچھا جاتا ہے کہ ہم نے ٹیم کیوں بھیجی، یہ سوال ویسٹ انڈیز کرکٹ حکام سے بھی ہونا چاہئے کہ انہوں نے کیوں حامی بھری۔

ان کا کہنا ہے کہ جہاں تک ہمارے فیصلے کا تعلق ہے تو اس کی وجہ کرکٹ کی بحالی کے علاوہ کچھ نہیں، اس وقت ورلڈ کرکٹ کیلئے کھیل کی بحالی اہم تھی، کوویڈ 19 اور کرکٹ کو ابھی ساتھ ساتھ چلنا ہے، گلوبل کرکٹ کے علاوہ انگلینڈ ٹیم بھیجنے کے فیصلے کی کوئی اور وجہ نہیں ہے۔ انگلینڈ کیساتھ میرے تعلقات کی بات کی جاتی ہے تو میرے ریلشنز تو پہلے ہی انگلینڈ کے ساتھ ہیں، میں تو یہاں آنے سے پہلے وہاں ہی جاب کر رہا تھا، فیصلہ صرف کرکٹ کیلئے کیا۔

انہوں نے کہا کہ کوویڈ اور سیکیورٹی کی بنیاد پر کھیل کی بحالی کے حوالے سے فیصلے الگ الگ چیزیں ہیں، میں 2019ءمیں پی سی بی میں آیا، اس سے پہلے پاکستان میں کھیل کی بحالی کیلئے ٹیمیں کیوں نہیں آئیں، میں اس پر تبصرہ کرنے کی پوزیشن میں نہیں ہوں، میں تو اپنے آنے کے بعد کی بات کر رہا ہوں۔

مزید :

کھیل -