سٹیٹ بینک ڈسکاﺅنٹ ریٹ میں نمایاں کمی کرے: لاہورچیمبر

سٹیٹ بینک ڈسکاﺅنٹ ریٹ میں نمایاں کمی کرے: لاہورچیمبر

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

لاہور (کامرس رپورٹر) لاہور چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری نے سٹیٹ بینک آف پاکستان پر زور دیا ہے کہ تجارتی ، معاشی اور صنعتی سرگرمیوں کو فروغ دینے کے لیے ڈسکاﺅنٹ ریٹ میں نمایاں کمی کرے۔ ایک بیان میں لاہور چیمبرکے قائم مقام صدر میاں طارق مصباح نے کہا کہ آئندہ مانیٹری پالیسی میں سٹیٹ بینک آف پاکستان ڈسکاﺅنٹ ریٹ میں کم از کم ڈھائی سے تین فیصد کمی کا اعلان کرے تاکہ صنعتی شعبہ سستے قرضے لیکر اپنی پیداواری صلاحیت بڑھاسکے جوبرآمدات بڑھانے کے لیے بہت ضروری ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگر سٹیٹ بینک آف پاکستان نے نصف فیصد سے ایک فیصد کمی کی تو اس کا صنعتی شعبے اور معیشت کو کوئی فائدہ نہیں ہوگا۔ ماضی میں سخت مانیٹری پالیسی کے اچھے نتائج برآمد نہیں ہوئے لیکن اس سے سبق نہیں سیکھا گیا۔ میاں طارق مصباح نے کہا کہ ڈسکاﺅنٹ ریٹ کی زیادہ شرح صرف صنعت و تجارت ہی نہیں بلکہ مجموعی قومی معیشت کے لیے بھی مسائل پیدا کرتی آرہی ہے جس سے چھٹکارا پانا ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ معاشی حوالے سے اہم مقام رکھنے والے ممالک نے بھی افراط زر کی زیادہ شرح کے باوجود یا تو ڈسکاﺅنٹ ریٹ کم کیے یا پھر کم کرنے کے مراحل سے گزررہے ہیں تاکہ اپنی معیشت کو تحفظ دے سکیں۔ لاہور چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے قائم مقام صدر نے کہا کہ ڈسکاﺅنٹ ریٹ کی بلند شرح صنعتوں کی پیداواری لاگت میں اضافے کا بہت بڑا سبب ہے ، اس کی وجہ سے پاکستانی مصنوعات کو عالمی منڈی میں اُن ممالک کی مصنوعات کے مقابلے میں شدید دشواریوں کا سامنا ہے۔
 جنہوں نے ڈسکاﺅنٹ ریٹ بہت کم سطح پر رکھا ہے۔ انہوں نے کہا کہ صنعتوں کو سستے قرضوں کی فراہمی یقینی بنانے کے لیے سٹیٹ بینک آف پاکستان ڈسکاﺅنٹ ریٹ میں ڈھائی سے تین فیصد کمی کا اعلان کرے تاکہ صنعتوں کی پیداواری لاگت میں کمی آئے، پیداواری صلاحیت بڑھے اور ملک کی بیرونی تجارت کو فروغ حاصل ہو۔ میاں طارق مصباح نے کہا کہ موجودہ حکومت ملک کی معاشی بحالی کے لیے بہترین اقدامات اٹھارہی ہے ، ایسے میں اگر ڈسکاﺅنٹ ریٹ میں نمایاں کمی کا اعلان کیا جاتا ہے تو یہ سونے پر سہاگے کی مانند ہوگا۔

مزید :

کامرس -