زمین کی گہرائیوں میں رہنے والا ’شیطانی ‘جانور

زمین کی گہرائیوں میں رہنے والا ’شیطانی ‘جانور

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


شکاگو (نیوز ڈیسک) زمین کی گہرائی میں بے پناہ درجہ حرارت اور دباﺅ کی وجہ سے زندگی کا تصور بھی ناممکن ہے لیکن امریکی سائنسدانوں نے زمین کے نیچے تقریباً ساڑھے تین کلو میٹر کی گہرائی پر رہنے والے شیطانی کیڑے کا سراغ لگالیا ہے۔ پرنسٹن یونیورسٹی کے ماہرین حیاتیات نے دریافت کیا ہے کہ ہیلی سیفلیس میفسٹو نامی کیڑا اتنی گہرائی پر بھی زندہ پایا جاتا ہے کہ جہاں زندگی کا کبھی سوچا بھی نہیں گیا تھا۔ آدھے ملی میٹر لمبائی کے اس کیڑے کی غذا بیکٹیریا ہیں۔ سائنسدانوں نے زمین کی گہرائی سے پانی کے نمونے حاصل کئے جن کے تجزیے سے اس جانورکا پتہ چلا۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ یہ کیڑے تقریباً 12 ہزار سال سے زمین کی اتھاہ گہرائیوں میں زندگی گزاررہے ہیں۔ اس سے پہلے یہ سمجھا جاتا تھا کہ کچھ سو فٹ کی گہرائی تک بھی کوئی جانور زندہ نہیں رہ سکتا اور صرف جراثیم ہی زیادہ گہرائی پر زندہ رہتے ہیں۔ لیکن اس تحقیق نے ثابت کردیا ہے کہ زمین کی سطح سے ہزاروں فٹ نیچے بھی زندگی پائی جاتی ہے۔ ناقابل تصور گہرائی، درجہ حرارت اور دباﺅ میں بھی زندہ رہ پانے کی خاصیت کی وجہ سے اس کیڑے کو ”شیطانی کیڑے“ کا نام دیا گیا ہے۔

مزید :

صفحہ آخر -