A PHP Error was encountered

Severity: Notice

Message: Undefined offset: 0

Filename: frontend_ver3/Sanitization.php

Line Number: 1246

Error

A PHP Error was encountered

Severity: Notice

Message: Undefined offset: 2

Filename: frontend_ver3/Sanitization.php

Line Number: 1246

خسرو بختیار نے پی پی امیدوار مخدوم شہاب الدین سے ڈیل کرلی : احمد محمود

خسرو بختیار نے پی پی امیدوار مخدوم شہاب الدین سے ڈیل کرلی : احمد محمود

Jun 25, 2018 | 13:11:PM

رحیم یار خان (ویب ڈیسک) پیپلز پارٹی جنوبی پنجاب کے صدر و سابق گورنر پنجاب مخدوم سید احمد محمود نے کہا ہے کہ ضلع رحیم یار خان سمیت جنوبی پنجاب میں ن لیگ اور پی ٹی آئی کی ٹکٹوں کی تقسیم کا تماشہ لگا ہوا ہے اور مسلم لیگ ن کو امیدوار نہیں مل رہے جبکہ پی ٹی آئی اپنے ہی پارٹی ورکروں کی قربانی کر رہی ہے اور نظریات کی سیاست کے دعوے دار مفاد پرستوں کے ٹولوں میں گھر چکے ہیں لہٰذا پیپلز پارٹی میں ان دونوں جماعتوں کے نظر انداز کئے پارٹی رہنمائوں سے مکمل ہمدردی اور ان کیلئے دروازے کھلے ہوئے ہیں پیپلز پارٹی غریب کسان ، ہاری اور مزدور کی جماعت ہے جہاں پر لوگوں کی عزت پر کوئی سمجھوتہ نہیں کیاجائے گا۔

آئندہ عام انتخابات کے بعد پی پی پی اور پی ٹی آئی مرکز میں نئی مخلوط حکومت بنائیں گے تاہم رحیم یار خان میں مخدوم خسرو بختیار اور میاں امتیاز احمد کو آئندہ عام انتخابات میں ٹوکہ پرمنٹ کی سیاست کہ نتائج بھگتنا ہوں گے اور انہیں توقع ہے کہ ان انتخابات میں عوام توکہ پرمٹ کی سیاست کرنے والوں کی سیاست دفن کردیں گے۔ گزشتہ روز وائس چیئرمین ضلع کونسل مخدوم علمبردار ہاشمی کے بھتیجوں اور مخدوم نورعلی شاہ کے صاحبزادہ گان مخدوم حسن رضا ، مخدوم محسن رضا اور مخدوم اسد رضا و دیگر کا مسلم لیگ ن چھوڑ کر پیپلز پارٹی میں شمولیت کا اعلان کرنے کے موقع پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے مخدوم سید احمد محمود نے کہا ان کی شوگر مل میں ٹوکہ پرمٹ کی سیاست کرنے والوں کی شوگر ملوں کے مقابلے مین زمینداروں کو 5.50ارب روپے زیادہ اد کیے ہیں لیکن یہ کوئی زمینداروں پر احسان نہیں بلکہ یہ ان کا حق ہے۔

پی پی پی جنوبی پنجاب کے نائب صدر میاں میں شفیع کے پی ٹی آئی میں شمولیت سے پی پی پی کو کوئی فرق نہیں پڑتا۔ پی ٹی آئی رہنما مخدوم خسرو بختیار نے اپنے فرسٹ کزن اور این اے 177سے پی پی پی کے امیدوار مخدوم شہاب الدین سے ڈیل کرلی ہے جس کے نتیجے میں مخدوم خسرو بختیار این اے 177سے اپنی انتخابی مہم نہیں چلائیں گے اور یہی وجہ ہے کہ انہوں نے این اے 176سے انتخابات میں حصہ لینے کا فیصلہ کیا ہے تاکہ دونوں کزن اسمبلی میں پہنچ سکیں۔

حامد سعید کاظمی کے این اے 175سے آزاد امیدوار کی حیثیت سے ان کے انتخابات میں حصہ لینے سے پی پی پی کو فائدہ ہوگا۔ پچھلے عام انتخابات میں رحیم یار خان کے چند سیاستدانوں کو حکومتی اور ایک غیر سیاسی حکومتی شخصیت کی سر پرستی حاصل تھی جس کے باعث وہ 2013ءکے عام انتخابات میں توقع سے زیادہ نشستیں جیتنے میں کامیاب ہوگئے تھے۔ اس موقع پر سابق وفاقی وزیر و پی پی پی کے مرکزی رہنماءو امیدوار این اے حلقہ 177مخدوم شہاب الدین ، امیدوار حلقہ پی پی 259اور 261مخدوم سید ارتضیٰ ہاشمی ، مخدوم مرتضیٰ محمود ، مخدوم مصطفی محمود ، مخدوم علی محمود ، مخدوم عثمان محمود، مخدوم طاہر رشیدالدین ، پیپلز پارٹی کے ضلع صدر سردار حبیب الرحمن خان گوپانگ ، سابق ایم این اے میجر (ر) تنویر حسین سید ، ، پی ٹی آئی کے رہنماءراجہ محمد سلیم ،سابق ایم پی اے میاں محمد اسلم ، جمال مراد فقیر اور سردار اورنگزیب ڈاہر ، اصغر حمیدی و دیگر پیپلزپارٹی کے کارکنوں کی کثیر تعداد بھی۔

دریں اثنا احمد محمود نے صادق آباد میں مشاورتی اجلاش میں خطاب کرتے ہوئے کہا کہ تخت لاہور نے ہمیشہ جنوبی پنجاب کے عوام کا استحصال کیا ہے۔ عوام الیکشن 2018ءبا کردار نمائندوں کا انتخاب کریں۔ عوام کرپشن کرنیوالے سیاستدانوں کو آئندہ الیکشن میں عبرتناک شکست دیں۔ امیدوار حلقہ این اے 180مخدوم سید مرتضیٰ محمود ‘ امیدوار حلقہ پی پی 266ممتاز علی خان پانگ اور امیدوار حلقہ پی پی 265رئیس نبیل احمد نے کہا کہ پیپلز پارٹی غریبوں ، مزدوروں اور محنت کشوں کی جماعت ہے جس نے ہمیشہ ملک کے غریب عوام کے حقوق کی جنگ لڑی ہے۔

اس موقع پر مخدوم سید علی محمود ‘ مخدوم عثمان محمود، رانا طارق محمود خاں‘ چودھری شہزاد عادل باجوہ ‘ رانا ندیم افضل ‘ عبدالستار چانگ ‘ چودھری فاروق عزیز ‘ گجر ‘ شاہد ترہیلی ‘ رئیس در محمد خالطی ‘ خام امجد بھیٹ‘ منگل خان ‘ انٹر‘ حافظ فیض الرحمن بھیٹ و دیگر بھی موجود تھے۔

مزیدخبریں