مہمند،سیلابی ریلے نے تین معصوم جانیں نگل لیں

مہمند،سیلابی ریلے نے تین معصوم جانیں نگل لیں

  

مہمند(نمائندہ پاکستان)طوفانی بارش نے مختلف علاقوں میں جانی اور مالی نقصانات پہنچادی۔علاقہ گڑنگ میں تین بچے اور احمدی کور کے قریب پک اپ ڈاٹسن سیلابی ریلے میں بہہ گئے۔جبکہ تیز آندھی اور طوفانی بارش سے کئی گھر منہدم ہونے کے ساتھ متعدد سولر سسٹم اکھاڑ کر ناکارہ بنا دی۔ملک کے دوسرے حصوں کے طرح طوفانی بارش اور تیز آندھی نے مختلف تحصیلوں میں جانی نقصانات کے ساتھ ساتھ غریب عوام کو مالی خسارے سے دو چار کئے۔تحصیل پنڈیالی علاقہ گڑنگ میں قریبی رشتہ دار وں کے تین کم سن بچے سیلابی ریلے میں بہنے سے جان بحق جبکہ چوتھی بچی زندہ نکال دی گئی۔اسکے ساتھ ملحقہ علاقہ احمدی کور کے قریب پک اپ ڈاٹسن سیلابی ریلے میں بہہ گیا مگر ڈرائیور افسر خان زخمی حالت میں بچ نکلا۔اسکے علاوہ تحصیل حلیم زئی سنگر کلے میں مولانا عبدالحق، اجمل، آمان اللہ سمیت یاسین کور میں حبیب سید کے گھر وں کی چاردیواریاں اور علاقہ آٹوخیل میں نور حمان کے مال مویشی کا کمرہ منہدم ہو گئے ہیں۔جبکہ علاقے کے کئی مقامات پر سولر سسٹم تیز آندھی کی وجہ سے ٹوٹ پھوٹ کاشکارہو کر ناکارہ بن گئے۔ان سولر سسٹم میں گھریلو روشنی کے ساتھ آبپاشی اور آبنوشی کے لئے استعمال ہونے والے سولر پلانٹ شامل ہیں۔ناکارہ ہونے والے ا ٓبپاشی سسٹم میں اجمل ولد محبوب غازی بیگ اور رحیم ولد دوست محمد وغیرہ کے پلانٹ شامل ہیں۔ طوفانی بارش سے کھڑی فصلوں کو شدید نقصانات ہوا ہیں۔دریں اثناء ضلع مہمند میں قائم مقام ڈی پی او محمد شعیب نے متاثرہ علاقے پنڈیالی کا دورہ کیا اور سیلابی ریلے سے جان بحق بچوں کے ورثاء کے ساتھ تعزیت کی اور موقع پر نقد امدادبھی کیا۔علاقے کے فلاحی اور سماجی حلقوں نے حکومت سے متاثرہ لوگوں کے ساتھ فوری تعاون کا پر زور مطالبہ کیا ہے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -