چپکے سے بھارت نے سمندر میں کیا کام کرنا شروع کردیا، خفیہ منصوبہ سامنے آگیا

چپکے سے بھارت نے سمندر میں کیا کام کرنا شروع کردیا، خفیہ منصوبہ سامنے آگیا
چپکے سے بھارت نے سمندر میں کیا کام کرنا شروع کردیا، خفیہ منصوبہ سامنے آگیا

  

نئی دہلی(مانیٹرنگ ڈیسک)تبت کے علاقے میں چین اور بھارت کے درمیان کشیدگی ابھی کم نہیں ہو پائی تھی کہ اب مو¿قر جریدے فوربز نے بحر ہند کے متعلق بھارت کے مذموم عزائم سے پردہ اٹھا دیا ہے۔ اخبار نے اپنی ایک رپورٹ میں بتایا ہے کہ بھارت اپنی بحری لڑائی کی صلاحیتوں میں تیزی سے اضافہ کر رہا ہے اور اپنی آبدوزوں میں جدت لانے کے ساتھ ساتھ ان کی تعداد بھی تیزی سے بڑھا رہا ہے تاکہ بحرہند میں غلبہ پا سکے۔ اب وہ نیوکلیئر پاورڈ آبدوزیں بھی تیار کر رہاہے۔ آبدوزوں کی صلاحیتیں بڑھانے کے ساتھ ساتھ بھارت اینڈامین اور نیکوبار نامی جزیروں پر اپنی نیوی کی تعداد بھی بڑھا رہا ہے۔ یہ جزیرے تژویراتی اعتبار سے انتہائی اہمیت کی حاملہ آبنائے ملاکہ کے قریب واقع ہیں۔

چین کے ساتھ تبت کے علاقے میں مڈبھیڑ اور 20بھارتی فوجیوں کی ہلاکت کے بعد بحرہند میں بھی بھارتی نیوی کی سرگرمیوں میں اضافہ ہوا ہے۔ اگرچہ چین اور بھارت کے تعلقات میں کشیدگی کم کرنے کی کوششیں جاری ہیں لیکن یہ اس نہج پر پہنچ چکے ہیں کہ کسی بھی وقت کوئی خطرناک موڑ لے سکتے ہیں۔اس بحران میں بھارتی نیوی سمندروں سے ہٹ کر بھی اہم کردار نبھا رہی ہے۔ تاہم اب بھی اس کی توجہ کا مرکز بحرہند اور آبنائے ملاکہ ہی ہیں۔ یہ تژویراتی اعتبار سے اس لیے بھی ہم ہے کہ چین بھی تیزی کے ساتھ اپنی نیوی کی طاقت بڑھا رہا ہے اور بحرہند میں ایک بڑی طاقت بن کر سامنے آ رہا ہے۔ امریکی کیپٹن جیمز ای فینل نے سنڈے گارڈین میں شائع ہونے والے اپنے ایک آرٹیکل میں پیش گوئی کی ہے کہ 2030ءتک چینی نیوی کے پاس 110آبدوزیں ہوں گی۔رپورٹ کے مطابق چین کی اسی بڑھتی طاقت کے جواب میں بھارت بھی تیزی سے نئی اور جدید آبدوزیں تیار کرنے کی کوشش کررہا ہے۔

مزید :

بین الاقوامی -