لاک ڈاﺅن کے دوران 6 سال کے بچے بچیاں بھی کس شرمناک کام میں لگ گئے؟ تازہ تحقیق میں ایسا انکشاف کہ والدین کی نیندیں اُڑجائیں

لاک ڈاﺅن کے دوران 6 سال کے بچے بچیاں بھی کس شرمناک کام میں لگ گئے؟ تازہ تحقیق ...
لاک ڈاﺅن کے دوران 6 سال کے بچے بچیاں بھی کس شرمناک کام میں لگ گئے؟ تازہ تحقیق میں ایسا انکشاف کہ والدین کی نیندیں اُڑجائیں

  

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) کورونا وائرس کی وباءاور لاک ڈاﺅن کے دوران کم عمر بچے بچیاں ایسے شرمناک کام پر لگ گئے ہیں کہ سن کر والدین کے ہوش اڑ جائیں۔ میل آن لائن کے مطابق برطانیہ میں کی جانے والی ایک تحقیق میں معلوم ہوا ہے کہ برطانیہ میں لاک ڈاﺅن کے دوران موبائل فون پر فحش چیٹنگ کرنے والے کم عمر بچے بچیوں کی تعداد میں 200فیصد اضافہ ہو گیا ہے۔

تحقیق کرنے والے ماہرین کا کہنا ہے کہ فحش چیٹنگ کرنے والی بچیوں میں اکثریت 11سال عمر کی ہے جبکہ بچوں میں اکثریت 13سال عمر کی ہے۔ بے شمار ایسی بچیاں بھی جنسیت پر مبنی پیغامات بھیجے جن کی عمرمحض 6تھی۔ سیف ٹو نیٹ نامی فرم کے ماہرین کی طرف سے کیے گئے اس سروے میں بتایا گیا ہے کہ کم عمر بچوں اور بچیوں کی طرف سے جنسیت پر مبنی فحش چیٹنگ ان اوقات میں زیادہ کی گئی جو سکول کے اوقات ہیں۔ واضح رہے کہ اس تحقیق میں ماہرین نے کم عمر بچوں اور بچیوں کی طرف سے بھیجے گئے 7کروڑ پیغامات کا جائزہ لیا اور نتائج مرتب کیے۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -