جاپان نے غیر ملکیوں کے لیے دروازے کھول دئیے، امیگریشن قوانین میں نرمی، خواہشمندوں کے لیے بڑی خوشخبری

جاپان نے غیر ملکیوں کے لیے دروازے کھول دئیے، امیگریشن قوانین میں نرمی، ...
جاپان نے غیر ملکیوں کے لیے دروازے کھول دئیے، امیگریشن قوانین میں نرمی، خواہشمندوں کے لیے بڑی خوشخبری

  

ٹوکیو(مانیٹرنگ ڈیسک) جاپان نے اپنے ہاں آ کر کام کرنے کے خواہش مند غیرملکیوں کے لیے دروازے کھول دیئے ہیں۔ فارن پالیسی میں شائع ہونے والے آرٹیکل میں مصنف مارٹن جیلین لکھتے ہیں کہ ”مغربی دنیا زیادہ سے زیادہ اپنے مقامی لوگوں کو برسرروزگار کرنے کے لیے غیرملکیوں پر قدغنیں لگا رہی ہے، ایسے میں جاپان کی دائیں بازو کی حکومت نے اپنے امیگریشن قوانین انتہائی نرم کر دیئے ہیں اور وہاں کوئی احتجاج بھی نہیں ہوا۔“

مارٹن جیلین لکھتے ہیں کہ ”2019ءمیں جاپانی حکومت نے امیگریشن سسٹم میں تاریخی اصلاحات کیں اور ایسے ویزا پروگرام متعارف کروائے اور پہلے سے موجود پروگرامز میں توسیع کی جن کے تحت اگلے پانچ سالوں میں 3لاکھ 45ہزار نئے ورکرز جاپان پہنچیں گے اور یہ تعداد بتدریج بڑھتی جائے گی۔ جاپان کی انہی اصلاحات کی بدولت اب ملک میں غیرملکیوں کی تعداد 30لاکھ سے تجاوز کر چکی ہے جو 1990ءمیں صرف 10لاکھ تھی۔ جاپان کی شرح افزائش فی خاتون انتہائی کم ہو کر 1.4بچے فی خاتون تک پہنچ چکی ہے۔ اس وقت ملک کی 28فیصد آبادی 65سال سے زائد عمر کی ہے۔ یہی وجوہات ہیں کہ جاپانی حکومت ملک میں ورک فورس کی کمی پوری کرنے کے لیے غیرملکیوں کے لیے دروازے کھول رہی ہے اور اپوزیشن بھی اس حقیقت کو تسلیم کرتے ہوئے اس اقدام پر کوئی اعتراض نہیں کر رہی۔“

مزید :

بین الاقوامی -