’اپنے ہمسایوں کے ساتھ یہ سلوک مودی کی سب سے بڑی غلطی تھی اور اب اس کا خمیازہ بھگتنا پڑ رہا ہے‘ بین الاقوامی صحافی نے مودی کو آئینہ دکھا دیا

’اپنے ہمسایوں کے ساتھ یہ سلوک مودی کی سب سے بڑی غلطی تھی اور اب اس کا خمیازہ ...
’اپنے ہمسایوں کے ساتھ یہ سلوک مودی کی سب سے بڑی غلطی تھی اور اب اس کا خمیازہ بھگتنا پڑ رہا ہے‘ بین الاقوامی صحافی نے مودی کو آئینہ دکھا دیا

  

نئی دہلی(مانیٹرنگ ڈیسک) کون سا ہمسایہ ہے جس کے ساتھ بھارت کے تعلقات خوشگوار ہوں؟ یہی وجہ ہے کہ چین کے ساتھ ٹکراﺅ کے بعد بھارت کا ہر ہمسایہ اپنا وزن چین کے پلڑے میں ڈال رہا ہے۔ اب اس حوالے سے بھارتی نژاد بین الاقوامی صحافی اور پولیٹیکل سائنس کے پروفیسر سمیت گنگولی نے بھی بھارت کو آئینہ دکھا دیا ہے۔ فارن پالیسی میں شائع ہونے والے اپنے آرٹیکل میں سمیت گنگولی لکھتے ہیں کہ بھارت کو اپنے ہمسایوں کو نظرانداز کرنے کی سزا مل رہی ہے۔ وزیراعظم اس وعدے کے ساتھ حکومت میں آئے تھے کہ وہ بنگلہ دیش نیپال اور سری لنکا کے ساتھ تعلقات کو ترجیحی بنیادوں پر بہتر بنانے کے لیے اقدامات کریں گے لیکن وہ اس میں ناکام رہے۔ اب چین ان کی اسی ناکامی کا فائدہ اٹھا رہا ہے۔

سمیت گنگولی لکھتے ہیں کہ ”پہلی بار وزیراعظم بننے کے بعد نریندر مودی نے اپنی تقریب حلف برداری میں دیگر ہمسایہ ممالک سمیت پاکستان کے وزیراعظم کو بھی مدعو کیا تھا، جس سے دنیا کو عندیہ ملا کہ وہ ہمسایوں کے ساتھ تعلقات بہتر بنانے میں کتنے سنجیدہ ہیں لیکن آگے چل کر ہم نے دیکھا کہ پاکستان کے ساتھ تعلقات بہتر ہونے کی بجائے تاریخی ابتری کی طرف چلے گئے۔ اگر اس ابتری کی وجوہات تلاش کریں تو مودی حکومت کی کئی ناکامیاں ہیں جو ان وجوہات میں شامل ہیں۔ وزیراعظم مودی نے اپنے اقتدار کی ابتداءمیں ہمسایہ ممالک کے ساتھ تعلقات بہتر بنانے کے لیے جس عزم کا اظہار کیا تھا اگر اس پر کاربند رہتے اور ہمسایوں کو نظرانداز نہ کرتے تو انہیں آج یہ دن نہ دیکھنا پڑتے۔“

مزید :

بین الاقوامی -