سرکاری دفاتر میں ڈینگی لاروا کی موجودگی کی اطلاع ، انتظامیہ میں ہلچل

سرکاری دفاتر میں ڈینگی لاروا کی موجودگی کی اطلاع ، انتظامیہ میں ہلچل

 لاہور( جاوید اقبال ) صوبائی دارالحکومت کے سرکاری دفاتر اور پلازوں کی چھتوں پر ڈینگی لاروا کی موجودگی نے ضلعی انتظامیہ میں ہلچل مچا دی ہے جس کے بعد ضلعی انتظامیہ نے شہر کے نو ٹاؤنوں اور ڈپٹی ڈسٹرکٹ آفیسرز ہیلتھ کو تمام سرکاری عمارتوں کی چھتیں ایک ہفتے کے اندر اندر کلیئر کرنے کا ٹاسک دیدیا ہے جس کے لئے ہر ٹاؤن کے ڈینگی سکواڈ کو متحرک کیا گیا ہے جنہیں حکم دیا گیا ہے کہ جس سرکاری دفتر کی عمارت کی چھت یا جس پلازے کی عمارت پر ڈینگی مچھروں کا لاروا یا اس کی نشو و نما پانے کا ساز و سامان برآمد ہو اس سرکاری دفتر کے سربراہ اور پلازہ مالک کے خلاف انسداد ڈینگی ایکٹ کے تحت مقدمہ درج کروادیا جائے ایک ہفتہ کے بعد تمام سرکاری دفاترز اور پلازوں کے معائنے کے لئے خفیہ ٹیمیں تشکیل دی جائیں گی جو اچانک معائنہ کریں گی اور اس دوران کسی عمارت کی چھت پر ڈینگی مچھر کا لاروا یا اس کی نشو ونما کی باعث کا سامان پکڑا گیا تو متعلقہ ٹاؤن کے ٹی ایم او‘ ٹی او آر اور ڈپٹی ڈسٹرکٹ ٹاؤن آفیسر کے خلاف کاروائی ہو گی جن کا تبادلہ معطلی یا اس کے خلاف مقدمہ درج کروانے میں سے کوئی ایک سزا دی جائے گی ۔دریں اثناء محکمہ صحت اور محکمہ ماحولیات کو بھی مراسلے بھجوائے گئے ہیں جن میں سیکرٹری صحت سے کہا گیا ہے کہ وہ سرکاری اور غیر سرکاری ہسپتالوں کی چھتوں کو کلیر کروائیں اور ان چھتوں پر ڈینگی مچھروں کو مارنے کے لئے سپرے کرواایا جائے اور محکمہ صحت کے ہسپتالوں میں جو عمارتیں زیر تعمیر ہیں ان تمام عمارتوں میں پڑا ہوا ملبہ فوری طور پر ہٹایا جائے اور وہاں پر جہاں جہاں بھی پانی جمع ہے اس کو خشک کروایا جائے اور زیر تعمیر عمارتوں میں مچھر مار سپرے کروایا جائے ۔بتایا گیا ہے کہ محکمہ ماحولیات کی ٹیموں نے سرکاری عمارتوں میں سے بعض کے اچانک سروے کے دوران ڈینگی مچھروں کا لاروا برآمد کیا تھا جس کی رپورٹ انتظامیہ کو دی گئی تھی اس کی بناء پر ہی ہنگامی اقدامات کئے گئے ہیں ٹاؤنوں سے کہا گیا ہے کہ وہ اپنی رپورٹس ایک ہفتے میں مکمل کرکے ڈی سی او کو جمع کروائیں ۔اس حوالے سے ڈی سی او کیپٹن عثمان کا کہنا ہے کہ یہ سچ ہے کہ ڈینگی کا لاروا شہر میں موجود ہے ایسی ہر جگہ پر آپریشن کیا جائے گا جہاں پر ڈینگی لاروا کے پیدا ہونے کے امکانات موجود ہیں اسی لئے ٹاؤنوں سے کہا گیا ہے کہ وہ سرکاری عمارتوں کو کلیر کروائیں ٹائروں کے گوداموں کو بھی چیک کروایا جا رہا ہے ۔

مزید : میٹروپولیٹن 1