سب سن لیں ،کراچی آپریشن مصلحت کا شکار نہیں ہو گا،نواز شریف

سب سن لیں ،کراچی آپریشن مصلحت کا شکار نہیں ہو گا،نواز شریف

 اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک، اے این این ) وزیر اعظم نواز شریف نے کہا ہے کہ سب سْن لیں! کراچی آپریشن کسی مصلحت کا شکار نہیں ہوگا۔ وہ آج شہر قائد جا کر آپریشن کرنے والوں کو شاباش دیں گے۔مڈل ایسٹ سے آئے ہوئے پاکستانیوں کے بیس رکنی وفد سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ایک بڑی سیاسی جماعت کے دفتر سے سزا یافتہ مجرم اور اسلحہ برآمد ہونا افسوسناک ہے۔وزیراعظم نے اوورسیز پاکستانیوں کے مسائل سفارتخانے کی سطح پر حل کرانے اور اسمبلیوں میں نمائندگی دلانے کی بھی یقین دہانی کرائی۔ دہشت گردوں کو مذہب یا کسی فرقے کی آڑمیں پناہ نہیں لینے دیں گے۔پاکستان میں نجی لشکروں اورہتھیار بند جتھوں کا دور ختم ہو گیا ہے، ایک دوسرے کا گلا کاٹنے کی اجازت نہیں دی جائے گی اور دہشت گردی کے خاتمے تک جنگ جاری رہے گی۔ ملک کو دہشت گردی سے پاک کرنا ان کی اولین ترجیح ہے اور وہ تمام چیلنجز کی آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر ان کامقابلہ کر رہے ہیں۔گوجرانوالہ،سیالکوٹ،حافظ آباد اور نارووال سے تعلق رکھنے والے مسلم لیگ (ن) کے ارکان قومی اسمبلی نے بھی وزیر اعظم سے ملاقات کی جس میں اہم سیاسی اور علاقائی معاملات پر تبادلہ خیالات کیا گیا۔ اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے نواز شریف نے کہا کہ کراچی آپریشن کے باعث شہر کی صورتحال دن بدن بہتر ہو رہی ہے،ٹارگٹڈپریشن کا فیصلہ تمام جماعتوں کی مشاورت سے کیا گیا تھا،بلا تفریق آپریشن جرائم پیشہ عناصر کے خلاف ہو رہا ہے جس کا کریڈٹ ہماری حکومت کو جاتا ہے۔یہ آپریشن کسی جماعت کے خلاف نہیں بلکہ جرائم پیشہ عناصر کے خلاف کیا جا رہا ہے اوربلا تفریق کیا جا رہا ہے ۔یوم پاکستان پر پریڈ ملک میں امن کے لئے کی گئی کوششوں کی کامیابی کا ثبوت ہے۔ انہوں نے کہا کہ توانائی بحران ورثے میں ملا ، محدود وسائل کے باوجود توانائی کی قلت پر قابو پانے کے لئے کوشاں ہیں ۔نواز شریف نے ترقیاتی منصوبے بر وقت مکمل کرنے کی ہدایت کی۔دریں اثناء وزیراعظم محمد نواز شریف کے زیر صدارت سیاسی جماعتوں کے رہنماؤں کا اجلاس ہوا جس میں جوڈیشل کمشن کے قیام سے متعلق بات چیت کی گئی۔ ذرائع کے مطابق متحدہ قومی موومنٹ نے جوڈیشل کمشن کے قیام کی مخالفت کی۔ اجلاس میں بات کرتے ہوئے ایم کیو ایم رہنماء ڈاکٹر فاروق ستار کا کہنا تھا کہ کوئی بھی اہم قانون سازی آئین سے متصادم نہیں ہو سکتی۔ جوڈیشل کمشن کا قیام آئین کے آرٹیکل 225 اور 189 کی خلاف ورزی ہوگا۔ متحدہ کے سواباقی تمام جماعتوں نے جوڈیشل کمشن کے قیام کی حمایت کر دی ہے۔ ایم کیو ایم نے کراچی کی صورتحال پر وزیراعظم سے ملاقات کا وقت مانگ لیا ہے۔

مزید : صفحہ اول