ماضی کی تلخیوں کوبھلا کر خارجی چیلنجز سے مل کر نمٹنا ہو گا : شہباز شریف

ماضی کی تلخیوں کوبھلا کر خارجی چیلنجز سے مل کر نمٹنا ہو گا : شہباز شریف

لاہور(اے این این،این این آئی ) وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہبازشریف نے کہاہے کہ سندھ، بلوچستان، خیبر پختونخوا،پنجاب، آزادکشمیر اور گلگت بلتستان کا نام پاکستان ہے،پاکستان ہم سب کا ہے اورہمیں مل کر خارجی چیلنجز کا مقابلہ کرتے ہوئے اسے مضبوط،ترقی یافتہ اور خوشحال ملک بناناہے۔وزیراعلی محمد شہبازشریف نے ان خیالات کااظہار گزشتہ روزماڈل ٹاؤن میں بلوچستان کے کیڈٹ کالج مستونگ کے طلبہ اور اساتذہ کے وفد سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔انہوں نے کہا کہ بد قسمتی سے ملک کی 70سالہ تاریخ کے سفر میں بعض عناصر کی لالچ ،حرص اور ذاتی مفادات پرقومی مفادات کو قربان کرنے کے رویوں سے نقصان ہوا لیکن اب ہمیں ماضی کی غلطیوں او رتلخیوں کو بھلا کر آگے بڑھناہے اور ملک کی تعمیر وترقی میں اپنا بھرپورکردار ادا کرناہے۔میری اپیل ہے کہ خدارا! پاکستان کے 20کروڑ عوام کی خوشیوں، ملکی ترقی وخوشحالی اور قومی وحدت کے ایجنڈے پر اکٹھے ہوجائیں،سیاسی لڑائیاں تو ہوتی رہیں گی اور الیکشن ہوں گے تو کوئی جیتے گا اور کوئی ہارے گا لیکن ترقی اور خوشحالی کے اس سفر کے سنہری موقع کو خراب نہ ہونے دیں ورنہ آنے والی نسلیں معاف نہیں کریں گی کیونکہ قومی مفاد سے بڑھ کر کوئی چیز نہیں ہونی چاہیے،وزیراعلیٰ پنجاب نے کہا کہ ماضی میں تلخیاں موجود رہیں تاہم یہ قیادت کا کمال ہوتاہے کہ وہ مذکرات اور مثبت اقدامات کے ذریعے ان مسائل کاحل ڈھونڈے۔انہوں نے کہا کہ بلوچستان رقبے کے لحاظ سے پاکستان کا سب سے بڑا صوبہ ہے اور اس لحاظ سے اس کے چیلنجز بھی ہیں جبکہ ماضی میں بلوچستان سے ناانصافیاں ہوئی ہیں اور اسے کچھ جائز اور ناجائز شکایات بھی پیدا ہوئیں تاہم وزیراعظم محمد نوازشریف کی قیاد ت میں ماضی کی غلطیوں کے ازالے کے پیش نظر بلوچستان میں اربوں روپے کے منصوبوں پر تیز رفتاری سے کام ہورہاہے۔وزیراعلی نے کیڈٹس کو لیپ ٹاپ دئیے اور اعلان کیا کہ پنجاب حکومت بلوچستان کے طلبا وطالبات کے لئے پہلے کی طرح آئندہ بھی ہر طرح کا تعاون جاری رکھے گی۔انہوں نے کہا کہ بلاشبہ پاکستان نیوکلیئر طاقت بن چکاہے اوراس کا دفاع ناقابل تسخیر ہے اورخارجی دشمن اس کی طرف میلی آنکھ سے نہیں دیکھ سکتا لیکن دوسری طرف پاکستان زرعی ملک ہونے کے باوجود زراعت کے میدان میں اپنے مقاصد حاصل نہیں کرسکا ہے۔ملک کو غربت، تعلیم ، صحت جیسے چیلنجز کا سامناہے۔پاکستان میں شمولیت کے لئے بلوچستان کے سرداروں کا جو وژن تھااس کے تقاضے کہاں تک پورے ہوئے ہیں اس پر تعمیری مباحثہ ہوسکتا ہے لیکن اگر منفی سوچ کے ساتھ کسی موضوع پر بات کی جائے گی تو تقاضے پورے نہیں ہوں گے۔سوچ مثبت ہو تو منفی پہلوؤ ں کو اجاگرکریں تو جاندار مباحثہ ہوسکتاہے۔انہوں نے کہاکہ سانحہ مشرقی پاکستان بھی پاکستان کی تاریخ کا ایک افسوسناک پہلو ہے۔مشرقی پاکستان کی آبادی مغربی پاکستان سے زیادہ تھی لیکن مساوات کے نام پر معاملے کو خراب کیا گیا اوردونوں حصوں کے درمیان نفرت کے بیج بوئے گئے جس بنا پر مشرقی پاکستان جداہوا جس کی وجہ برابری کے نام پر مغربی پاکستان کی اجارہ داری مشرقی پاکستان کی اکثریت پر مسلط کرنے کی کوشش کی گئی۔یقیناًیہ ہماری تاریخ کا تکلیف دہ واقعہ ہے جس سے سبق حاصل کیا جانا چاہیے تھا۔انہوں نے کہاکہ ڈکٹیٹر مشرف10سال تک ڈنڈے کے زور پر این ایف سی ایوارڈ حاصل نہ کرسکالیکن چاروں صوبائی حکومتوں اور وفاق نے 2010میں سیاسی بصیرت اور شعور کا مظاہرہ کرتے ہوئے این ایف سی ایوارڈ منظور کیا۔قبل ازیں سیکرٹری، کیمونسٹ پارٹی آف چائنہ ہؤبی ، صوبائی کمیشن برائے ڈسپلن انسپیکشن ہؤچین گن کی قیادت میں اعلی سطح کے وفد سے ملاقات کے دوران گفتگو کرتے ہوئے وزیراعلیٰ شہبازشریف نے کہا ہے کہ پاکستان اور چین کے تعلقات انمٹ اور مثالی دوستی میں بندھے ہوئے ہیں اورسی پیک نے پاکستان اور چین کی دوستی کو ہمیشہ کیلئے امر کر دیا ،سی پیک کے منصوبوں پر تیز رفتاری سے عملدرآمد پر پوری دنیا حیران ہے، چین کے صدر شی جن پنگ کے ون بیلٹ ون روڈ کے وژن سے پورا خطہ مستفید ہوگا۔چینی وفد سے ملاقات میں باہمی دلچسپی کے امور، سی پیک کے منصوبوں ،پنجاب حکومت اور چینی صوبے ہؤبی کے درمیان تعلقات کو فروغ دینے پر تبادلہ خیال کیاگیا۔پنجاب حکومت اور چینی صوبے ہؤبی کے مابین مختلف شعبوں میں تعاون کو پائیدار بنیادوں پرفروغ دینے پر اتفاق ہوا۔وزیراعلیٰ شہبازشریف نے کہا کہ مسلم لیگ (ن) کی حکومت کے دور میں پاکستان اور چین کے تعلقات نئی بلندیوں کو چھو رہے ہیں۔ پاکستان میں ہزاروں چینی انجینئرزاورورکرز دن رات مختلف منصوبوں پر کام کررہے ہیں۔چین کی قیادت نے پاکستان کے ساتھ جس والہانہ محبت کا اظہارکیااس کی مثال نہیں ملتی۔دونوں ملکوں کی قیادت نے تعلقات کو نئی جہت دی ہے اور سی پیک نے پاکستان میں سرمایہ کاری کے نئے مواقع پیدا کئے ہیں۔وزیراعلیٰ نے کہا کہ پنجاب حکومت نے وسائل کے درست اورشفاف استعمال کیلئے مربوط نظام بنایا ہے اورایک ایک پائی عوام کی فلاح پر دیانتداری کے ساتھ خرچ کی جارہی ہے ۔ پنجاب حکومت نے کرپشن کیخلاف زیرو ٹالرنس کی پالیسی اپنائی ہے اورکرپٹ افراد کے خلاف بلاامتیاز کارروائی کی گئی ہے۔ حکومت کی شفاف پالیسیوں کا اعتراف بین الاقوامی سطح پر بھی کیا جا رہا ہے۔پنجاب حکومت اور چینی صوبے ہؤبی کے درمیان پائیدار بنیادوں پر تعلقات کو فروغ دیں گے۔ملاقات کے دوران پنجاب اور ہؤبی کی مشترکہ کمیٹی تشکیل دی گئی جو دو طرفہ تعاون کو فروغ دینے کیلئے اقدامات کا جائزہ لے گیس۔اس موقع پر سیکرٹری کمیونسٹ پارٹی آف چائنہ ہؤبی ،ہؤچین گن نے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ وزیراعلیٰ شہبازشریف نے صوبہ پنجاب کو معاشی طو رپر مضبوط بنایا ہے اور ان کے مثالی اقدامات سے صوبہ پنجاب میں نمایاں ترقی ہوئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ وزیراعلیٰ شہبازشریف نے صوبہ پنجاب کی معاشی ترقی کیلئے بھی قابل قدر اقدامات کیے ہیں اوران کی غیر معمولی صلاحیتوں کی تعریف چین میں بھی کی جاتی ہے اوربلاشبہ پنجاب میں ہونیوالی ترقی غیر معمولی ہے،جس کاکریڈٹ وزیراعلیٰ شہبازشریف کی انتظامی صلاحیتوں کو جاتا ہے۔ ہؤچین نے وزیراعلیٰ شہباز شریف کو صوبے ہؤبی کے دورے کی دعوت دیتے ہوئے کہا کہ پنجاب حکومت کے ساتھ مستقبل میں مختلف شعبوں میں تعاون کو فروغ دیں گے۔دریں اثناء پنجاب پبلک سروس کمیشن کی کارکردگی سے متعلق جائزہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعلیٰ شہبازشریف نے کہا کہ پنجاب پبلک سروس کمیشن کو مضبوط اور خوب سے خوب تر بنانے کیلئے تسلسل کے ساتھ اقدامات جاری رکھے جائیں اور ادارے میں جدید ٹیکنالوجی کو فروغ دے کر اسے مکمل طور پر عصر حاضر کے تقاضوں سے ہم آہنگ بنایا جائے۔ انہوں نے کہا کہ امیدواروں کے انٹرویوز ویڈیو لنک اور سکائپ کے ذریعے کرنے کے انتظامات کئے جائیں تاکہ امیدواروں کوسہولت ملے۔انہوں نے کہا کہ پنجاب پبلک سروس کمیشن کے پورے نظام کو آن لائن کیا جائے۔ وزیراعلیٰ نے پنجاب پبلک سروس کمیشن کے تمام ڈویژنوں میں ریجنل آفس کے علاوہ بڑے شہروں میں بھی ادارے کو وسعت دینے کی ہدایت کی ۔وزیراعلیٰ نے ایک اعلیٰ اختیاراتی کمیٹی تشکیل دینے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ یہ کمیٹی تمام سفارشات کا جائزہ لے کر حتمی پلان مرتب کرنے کے ساتھ سروس رولز کی بہتری، پری سروس ٹریننگ اور دیگر امور کا بھی جائزہ لے گی۔قبل ازیں چیئرمین پنجاب پبلک سروس کمیشن لیفٹیننٹ جنرل (ر) سجاد اکرم نے ادارے کی سال 2016 ء کی کارکردگی رپورٹ پیش کی۔

شہبازشریف

مزید : صفحہ اول


loading...