20 مقدمات زیر سماعت ہیں ’’ملزم وزیراعلیٰ کو اس تقریب میں بیٹھنے سے روکا جائے‘‘ہائی کورٹ کے چیف جسٹس کو خط لکھ دیا گیا

20 مقدمات زیر سماعت ہیں ’’ملزم وزیراعلیٰ کو اس تقریب میں بیٹھنے سے روکا ...
20 مقدمات زیر سماعت ہیں ’’ملزم وزیراعلیٰ کو اس تقریب میں بیٹھنے سے روکا جائے‘‘ہائی کورٹ کے چیف جسٹس کو خط لکھ دیا گیا

  


الہ آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)بھارت میں انتہا پسند ہندو  رہنما ،انڈین وزیر اعظم نریندرامودی کے کارخاص اور اترپردیش کے نو منتخب وزیر اعلیٰ آدتیہ ناتھ یوگی کے منصب سنبھالنے کے بعد بھی ان کے انتخاب پر تنقید کا سلسلہ جاری ہے ،آدتیہ ناتھ یوگی بھارت میں مسلم دشمنی اور تعصب میں مودی سے بھی دو ہاتھ آگے ہیں ،اب الہ آباد ہائی کورٹ کے قیام کے 1سو50سالہ جشن کی تقریبات میں آدتیہ ناتھ کی شرکت پر بھی ایک نیا تنازع پیدا ہو گیا ہے ،ریاست کی انسانی حقوق کی کئی بڑی اور اہم تنظیموں نے الہ آباد ہائی کورٹ کی تقریبات میں اتر پردیش کے ’’ریکارڈ یافتہ وزیر اعلیٰ‘‘ کی شرکت روکنے کے لئے چیف جسٹس کے نام مشترکہ خط لکھ دیا ہے ۔

مزید پڑھیں:بھارت کاپاکستان اوربنگلادیش کے ساتھ بین الاقوامی سرحد سیل کرنے کا منصوبہ:راج ناتھ

بھارتی نجی چینل’’انڈیا ٹی وی ‘‘ کے مطابق الہ آباد ہائی کورٹ کے قیام کے ڈیڑھ سو سالہ جشن کی اختتامی تقریبات میں اتر پردیش کے وزیر اعلی آدتیہ ناتھ یوگی کی شرکت پر انسانی حقوق کی کئی معتبر تنظیموں نے سوالیہ نشان کھڑا کر دیا ہے ۔ انسانی حقوق کے لیے کام کرنے والی کئی سر کردہ تنظیموں نے الہ آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس کو ایک عرضداشت دے کر گزارش کی ہے کہ یوگی آدتیہ ناتھ کو ہائی کورٹ کی تقریبات میں شرکت کی اجازت نہ دی جائے۔انسانی حقوق کی تنظیموں کی جانب سے لکھے جانے والے خط میں کہا گیا ہے کہ یوگی آدتیہ ناتھ پر تعزیرات ہند کی کئی سنگین دفعات کے تحت 20 سے زائد مقدمات عدالتوں میں زیر سماعت ہیں، ایسے میں اعلیٰ عدالتوں کے ججوں کے ساتھ یوگی آدتیہ ناتھ کی شمولیت سے سماج میں غلط پیغام جائے گا۔واضح رہے کہ الہ آباد ہائی کورٹ کے قیام کے ڈیڑھ سو برس پورے ہونے کی اختتامی تقریبات 2 اپریل سے شروع ہو جائیں گی جن میں بھارتی وزیر اعظم نریندرا مودی سمیت ریاست کے وزیر اعلیٰ یوگی آدتیہ ناتھ بھی شریک ہوں گے۔

مزید : بین الاقوامی


loading...