پاکستان ڈاکٹرز گروپ کے زیراہتمام کورونا وائرس آن لائن آگاہی کانفرنس، سفیرِ پاکستان راجہ علی اعجاز کی خصوصی شرکت

پاکستان ڈاکٹرز گروپ کے زیراہتمام کورونا وائرس آن لائن آگاہی کانفرنس، سفیرِ ...
پاکستان ڈاکٹرز گروپ کے زیراہتمام کورونا وائرس آن لائن آگاہی کانفرنس، سفیرِ پاکستان راجہ علی اعجاز کی خصوصی شرکت

  



ریاض (وقار نسیم وامق) سعودی عرب میں پاکستان ڈاکٹرز گروپ کی جانب سے کورونا وائرس کی روک تھام اور اسکے علاج کے حوالے سے آن لائن آگاہی کانفرنس کا انعقاد کیا گیا جس میں دنیا بھر سے مختلف میڈیکل ماہرین کے علاوہ پاکستانی سفیر راجہ علی اعجاز بھی شریک ہوئے. اس موقع پر پاکستان سے تمغہ امتیاز ڈاکٹر عبدالباری نے ویڈیو لنک کے ذریعے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ دنیا بھر کی طرح کورونا وائرس سے پاکستان بھی متاثر ہو رہا ہے ہماری سندھ گورنمنٹ کے ساتھ ملکر کوشش ہے کہ اس وبا پر احتیاطی اقدامات کو بروکار لاکر قابو پایا جاسکے اسکے علاوہ جس طرح سعودی عرب اور دیگر ممالک میں کرفیو لگا کر لاک ڈاؤن کیا گیا ہے بلکل اسی طرح پاکستان میں بھی اقدامات اٹھانے کی ضرورت ہے کیونکہ اسکے بنا اندیشہ ہے کہ کورونا وائرس پر قابو نہیں پایا جاسکے گا اور جس طرح سے روز کورونا وائرس سے متاثرہ افراد کی تعداد بڑھ رہی ہے ہمیں سنجیدہ اور ٹھوس اقدامات کرنے ہونگے تاکہ ہم اپنی قوم کو اس جان لیوا مرض سے بچا سکیں. 

اس موقع پر پاکستانی سفیر راجہ علی اعجاز نے کہا کہ ہمارے سامنے کورونا وائرس بہت بڑا چیلنج بن کر کھڑا ہے مگر اسے عالمی ادارہ صحت کے اصولوں اور خود کو کورونا وائرس سے بچاو کے اصولوں کے مطابق ڈھال کر بچا جا سکتا ہے سعودی عرب میں 27 لاکھ پاکستانی موجود ہیں جنہیں چاہئیے کہ وہ سعودی قوانین اور حکومت کی جانب سے جو احتیاطی تدابیر اختیار کرنے کا کہا جا رہا ہے اس پر عمل کریں گھروں تک محدود رہیں ماسک کا استعمال مسلسل کریں. 

آن لائن ویڈیو کانفرنس سے ڈاکٹر کرن کلام نے کورونا وائرس سے بچاو اور اسکے علاج کے حوالے سے سیر حاصل گفتگو کی اور کہا کہ کورونا وائرس کے مریضوں کو انٹی بائیوٹک میڈیسن کے استعمال سے اجتناب کرنا چاہئیے اور حاملہ خواتین کو کورونا سے بچاو کے لئے سختی سے احتیاط برتنی چاہئیے، کانفرنس سے پی ڈی جی آر کے صدر ڈاکٹر اسد رومی،  ڈاکٹر سلیم،  ڈاکٹر یٰسین، ڈاکٹر ریاض خواجہ نے بھی کورونا وائرس کے حوالے سے گفتگو کی جبکہ ویڈیو لنک کے ذریعے سفارت خانہ کے دیگر افسران سمیت کیمونٹی ممبران نے بھی گفتگو سے استفادہ کیا. 

مزید : عرب دنیا