” پی ٹی آئی کو موٹروے یا فیض آباد انٹر چینج بند نہیں کرنے دیں گے “ سپریم کورٹ کے ریمارکس 

” پی ٹی آئی کو موٹروے یا فیض آباد انٹر چینج بند نہیں کرنے دیں گے “ سپریم کورٹ ...
” پی ٹی آئی کو موٹروے یا فیض آباد انٹر چینج بند نہیں کرنے دیں گے “ سپریم کورٹ کے ریمارکس 

  

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن )سپریم کورٹ نے شیلنگ روکنے کی پی ٹی آئی کی فوری درخواست مسترد کر دی اور جسٹس اعجازالاحسن نے ریمارکس دیئے کہ ایک گھنٹے میں کچھ نہیں ہو گا، اٹارنی جنرل کو ہدایات لینے دیں، پی ٹی آئی کو موٹروے یا فیض آباد بند نہیں کرنے دیں گے ۔

وقفے کے بعد سماعت دوبارہ شروع ہو تو سپریم کورٹ نے پنجاب پولیس کے اقدامات پر سخت برہمی کا اظہار کیاہے ، جسٹس اعجاز الحسن نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ کیا پولیس کا کام گاڑیاں توڑنا اور آگ لگانا ہے ، ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل پنجاب نے کہا کہ لاہور میں ایک گھر سے اسلحہ برآمد ہوا، جسٹس اعجاز الاحسن نے کہا کہ احتجاج روکنے کیلئے چھاپے اور گرفتاریاں غیر قانونی ہیں،پی ٹی آئی کو موٹروے یا فیض آباد بند نہیں کرنے دیں گے ،شیلنگ اور لاٹھی چارج کے حوالے سے باضابطہ حکم جاری کریں گے ۔

تحریک انصاف کی جانب سے عدالت میں استدعا کی گئی کہ جن کارکنوں گرفتار کیا گیا انہیں رہا کیا جائے ، جسٹس مظاہر نقوی نے ریمارکس دیئے کہ ایم پی او کے تحت ہونے والی ایف آرز نہیں چلیں گی ،جسٹس اعجاز الاحسن نے کہا کہ ایم پی او کے حوالے سے بھی حکم نامہ جاری کریں گے ۔

سپریم کورٹ نے شیلنگ فوری روکنے کی استدعا مسترد کر دی ، جسٹس اعجاز الحسن نے ریمارکس دیئے کہ ایک گھنٹے میں کچھ نہیں ہو گا ، اٹارنی جنرل کو ہدایات لینے دیں ، عدالت سیاسی درجہ حرارت کم کرنے کی کوشش کر رہی ہے ،حکومت اور پی ٹی آئی میں روابط اور اعتماد کا فقدان ہے ،انشاءاللہ عدم توازن ختم ہو جائے گا۔

مزید :

قومی -