لانگ مارچ کیلئے چند سو افراد نکلے ،  ہمیں اپنے انتظامات پر شرمندگی ہو رہی ہے ،  رانا ثناء اللہ 

لانگ مارچ کیلئے چند سو افراد نکلے ،  ہمیں اپنے انتظامات پر شرمندگی ہو رہی ہے ...
لانگ مارچ کیلئے چند سو افراد نکلے ،  ہمیں اپنے انتظامات پر شرمندگی ہو رہی ہے ،  رانا ثناء اللہ 

  

اسلام آباد ( ڈیلی پاکستان آن لائن ) وفاقی وزیر داخلہ رانا ثناء اللہ نے کہا کہ پی ٹی آئی کے لانگ مارچ کیلئے چند سو افراد نکلے جس پر ہمیں اپنے انتظامات پر شرمندگی ہو رہی ہے کہ ہم نے اتنے انتظامات کیوں کر لئے ۔

اسلام آباد میں نیوز کانفرنس کرتے ہوئے  رانا ثناء اللہ نے کہا کہ  پنجاب اور سندھ میں ہر طرح کا امن امان رہا صرف اکا دکا واقعات ہوئے ، پنجاب میں سب سے بڑا بتی چوک کا تھا،  وہ چند سو افراد جنہوں نے  لانگ مارچ میں حصہ لیا  ان کیلئے دعا گو ہوں کہ انہیں اللہ ہدایت دے ، یہ عمرانی فتنے میں گمراہ ہو کر ملک و قوم  کے نقصان میں اپنا حصہ نہ ڈالیں ،  جو قوم کو گمراہ کرنا چاہتا ہے ، تقسیم کرنا چاہتا ہے اس کے ایجنڈے کا ہرگز حصہ نہ بنیں، بلوچستان کے عوام مبارکباد کے مستحق ہیں کہ وہاں پر کسی کو کوئی علم نہیں ہے اس کا۔

وزیر داخلہ نے کہا کہ  سندھ کے لوگوں نے  فتنے کا حصہ بننے سے انکار کیا ، بلوچستان کے عوام مبارکباد کے مستحق ہیں ، انہیں تو علم بھی نہیں کہ کوئی لانگ مارچ ہے ، اسوقت صرف جو ہلکی سی ہلچل ہے وہ خیبرپختونخوا میں ہے  ، وہاں پر علی امین گنڈا پور اور علی نیازی  مارچ لے کر آگے بڑھ رہے ہیں ان کے ساتھ تین سے چار ہزار لوگ ہیں ، ان کے پاس  آنسو گیس کی گنز  اور کرینیں ہیں ، وہ سرکاری پروٹوکول  کے ساتھ وفاق پر چڑھائی کرنے کے ارادے سے رواں دواں ہیں ۔

رانا ثناء اللہ نے کہا کہ عوام کو گرمی میں دھکے کھاتے بلایا گیا ، خود انقلابی لیڈر ہیلی کاپٹر میں پہنچ گیا۔ یہ چند افراد پر مشتمل  وہ عوامی سیلاب ہے جسے لے کر یہ اسلام آباد پہنچ رہے ہیں ، اگر نہیں احساس  شرمندگی ہے تو  انہیں وہیں پر  اسے ختم کر دینا چاہئے تھا ،  20 لاکھ افراد کو لانے کا دعویٰ کرنے والے ٹارگٹ  کا   25 فیصد ہی پورا کر لیتے ، یہاں سے پانچ سات ہزار لوگ لے کر چلے اور کہا کہ تاریخ کا سب سے بڑا جلوس لے کر اسلام آباد پہنچنے کا دعویٰ کیا  اور ہم نے بھی اس کے جھوٹ کو سنجیدگی سے لیتے ہوئے  انتظامات کرلئے ۔

رانا ثناء اللہ نے کہا کہ اس سارے عرصے میں  میڈیا کا کردار بھی بہت مثبت رہا۔

مزید :

قومی -