ڈرون حملوں کیخلاف تحریک انصاف کے دھرنے دوسرے روزبھی جاری، کاغذات کی جانچ پڑتال کا عمل جاری، کوئی نیٹوکنٹینرنہیں گزرنے دیا: کارکنان

ڈرون حملوں کیخلاف تحریک انصاف کے دھرنے دوسرے روزبھی جاری، کاغذات کی جانچ ...

افغان ٹرانزٹ ٹریڈ بھی متاثر، ڈرائیوروں پر تشددکرنیوالے پی ٹی آئی کے 36کارکنان کے خلاف مقدمہ درج

  •  ڈرون حملوں کیخلاف تحریک انصاف کے دھرنے دوسرے روزبھی جاری، کاغذات کی جانچ پڑتال کا عمل جاری، کوئی نیٹوکنٹینرنہیں گزرنے دیا: کارکنان
  •  ڈرون حملوں کیخلاف تحریک انصاف کے دھرنے دوسرے روزبھی جاری، کاغذات کی جانچ پڑتال کا عمل جاری، کوئی نیٹوکنٹینرنہیں گزرنے دیا: کارکنان
  •  ڈرون حملوں کیخلاف تحریک انصاف کے دھرنے دوسرے روزبھی جاری، کاغذات کی جانچ پڑتال کا عمل جاری، کوئی نیٹوکنٹینرنہیں گزرنے دیا: کارکنان

پشاور، نوشہرہ(مانیٹرنگ ڈیسک) پاکستان میں ڈرون حملوں کے خلاف پاکستان تحریک انصاف کے خیبرپختونخواہ سے اتحادی افواج کی رسد روکنے کے لیے دوسرے روز بھی دھرنے جاری ہیں اور مختلف مقامات پر گاڑیوں کے کاغذات کی چیکنگ کے بعد افغان ٹرانزٹ ٹریڈ کے کنٹینرز کو آگے جانے دیاجارہاہے تاہم چوبیس گھنٹوں کے دوران نیٹو کا کوئی کنٹینرگزرنے نہیں دیاگیا، غیریقینی صورتحال کے پیش نظر ٹرانسپورٹرز نے نیٹو کے کنٹیرز کراچی میں ہی روک لیے ہیں جبکہ کچھ کنٹینرزراستے میں ہی مختلف مقامات پر کھڑے کردیئے گئے ہیں۔دوسری طرف دھرنوں میں تحریک انصاف یا جماعت اسلامی کے کسی رہنماءنے تاحال شرکت نہیں کی جبکہ گذشتہ روز ڈرائیوروں پر تشددکرنیوالے تحریک انصاف کے 35کارکنان کے خلاف آئی جی خیبرپختونخواہ ناصردارنی کی ہدایت پرمقدمہ درج کرلیاہے ۔ تفصیلات کے مطابق خیبرپختونخواہ میں دومقامات پر دھرنے جاری ہیں جبکہ دیگر مقامات پر تیاریاں مکمل کرلی گئی ہیں تاہم کنٹینرز روکنے کا عمل شروع نہیں ہوسکا۔ پشاور میں حیات آباد کے علاقے میں تحریک انصاف کے کارکنان نے لوڈر گاڑیوں کو روک کر کاغذات کی چیکنگ شروع کردی ہے جس کے بعد نیٹو کے علاوہ دیگرکنٹینرز کو گزرنے کی اجازت دی جارہی ہے جبکہ کسی بھی مقام پر جماعت اسلامی یا تحریک انصاف کے کسی رہنماءکی شرکت کی اطلاع موصول نہیں ہوئی۔اِسی طرح کی جانچ پڑتال کا عمل نوشہرہ میں خیرآباد اٹک پل پر بھی جاری ہے جہاں تحریک انصاف کے ساتھ ساتھ جماعت اسلامی کے ایک قافلے نے بھی خصوصی شرکت کی تاہم اتوار کے مقابلے میں کارکنان میں جوش و خروش کم ہے ۔کوہاٹ اور ڈیرہ اسماعیل خان میں تیاریاں مکمل کرلی گئی ہیں تاہم ابھی تک دونوں مقامات پر کسی کنٹینر کے روکے جانے کی اطلاع موصول نہیں ہوئی ۔ کارکنان کاکہناتھاکہ وفاقی اور دیگرصوبائی حکومتوں نے نیٹو کے کنٹینرز مختلف مقامات پر روک لیے ہیں یا اُن کا رخ چمن کی طرف موڑدیاہے ۔ کارکنان نے دعویٰ کیاکہ دودنوں سے افغانستان میں موجود اتحادی افواج کے لیے رسد لے جانے والے کسی کنٹینرکو گزرنے کی اجازت نہیں دی گئی ۔ دوسری طرف غیریقینی صورتحال کی وجہ سے افغان ٹرانزٹ ٹریڈ کی ترسیل بھی متاثرہورہی ہے ، ٹرانسپورٹرز نے نیٹوسپلائی کے کچھ کنٹینرزکراچی میں ہی روک لیے ہیں جبکہ 600کنٹینرز تاحال ٹرمینل پر موجود ہیں۔ٹرانسپورٹرز کا کہناتھاکہ ٹرمینل پر پڑے کنٹینرز میں نیٹوافواج کے کھانے پینے کی اشیاءاور دیگر سامان ہے ۔اُدھر گذشتہ روز ڈرائیوروں پر تشددکرنیوالے تحریک انصاف کے کارکنان کے خلاف مقدمہ درج کرلیاگیاہے تاہم کسی گرفتاری کی تصدیق نہیں ہوئی ۔ پولیس کاکہناہے کہ کسی سے زیادتی نہیں ہوگی ، کیمرا فوٹیج سے شناخت کے بعد ملزمان کے خلاف کارروائی کریں گے ۔یادرہے کہ گذشتہ شام تحریک انصاف نے اپنا دھرناختم کر دیا تھا اور کہاجارہاہے کہ امن وامان کی صورتحال کے پیش نظر رات کے اوقات میں نیٹوکی سپلائی بند رہتی ہے اور اِسی وجہ سے صرف دن کے وقت ہی دھرنے دیئے جائیں گے اور نیٹوسپلائی روکی جائے گی ۔

مزید : پشاور /Headlines